میں مسلمان ہوں اور میں ٹرمپ کو ووٹ دوں گا

zeeshanبشکریہ: ذیشان عثمانی

30جولائی1788میں William Lancaster(جو کہ نارتھ کیرولینا کے وفاق دشمن مندوب تھے)نے امریکہ کے لوگوں کو خبردار کیا تھا کہ ایک مسلمان بھی اُن کا صدر بن سکتا ہے اور ایسا ہونا آئین کی خلاف ورزی بھی نہیں ہے۔مجھے تو دو ہی صورتیں نظر آتی ہیں جن میں ایک مسلمان امریکہ کا صدر بن سکتا ہے۔
پہلی یہ کہ امریکہ کے تمام لوگ مسلمان ہو جائیں ، پھر تو وہ اپنے جیسا ہی ایک صدر منتخب کر سکتے ہیں۔ اور دوسرا یہ کہ وہ تمام اخلاقی، سماجی اور مذہبی خوبیاں جو امریکی اپنے صدر میں دیکھنا چاہتے ہیں وہ ایک مسلمان میں اُنہیں مل جائیں۔ اب جب کہ دو صدیوں کے بعد یہ سوال اُٹھایا جا رہا ہے کہ ’’ کیا ٹرمپ امریکہ کاصدر بن سکتا ہے؟‘‘ تو صورتیں تو وہی دو ہیں کہ یا تو سارے امریکی ٹرمپ جیسے ہو جائیں یا پھر جن اخلاقی اور سماجی خوبیوں کے لیے امریکہ آواز اُٹھاتا ہے وہ ساری خوبیاں ٹرمپ میں موجود ہوں۔اور اگر سچ میں ایسا ہے تو پھر تو ٹرمپ کو ہی امریکہ کا صدر بن جانا چاہئیے۔
ٹرمپ ایک شخص کا نام نہیں بلکہ یہ ایک سوچ ہے ایک نظریہ ہے جس کا مقصد یہ ہے کہ لوگوں کے جذبات کا مذاق اُڑایا جائے یا پھر اُن کو اُن کو مجبور کیا جائے کہ وہ اپنے اندر چھپے اُن خیالات کا اظہار کر دیں جن کی اجازت اُن کو اُس ملک کا آئین یا قانون نہیں دیتا۔یہ ایک نفسیاتی جنگ ہے، ایک نفرت انگیزی کی دوڑ ہے بلکہ طاقت اور اختیارات کو غلط ہاتھوں میں دینے کا ایک کمیونسٹ پراپیگینڈا ہے۔اور اب تبدیل ہوتا امریکہ چاہتا ہے کہ ہم بھی اس چیز کو تسلیم کر لیں۔
ایک اور بات امریکہ بدل نہیں رہا بلکہ ہمارے سامنے گذشتہ بیس سال میں تبدیل ہو چکا ہے اور شائد ہم اُس کی تبدیلی کو دیکھ ہی نہیں سکے۔ کیا آپ جانتے ہیں کہ سال 2016کے تمام چھ U.S Nobel Laureatesمہاجر ہیں؟ کیا آپ جانتے ہیں کہ امریکہ کی بیشتر یو نیورسٹیز کو بنانے والے اور سنبھالنے والے غیر ملکی پیدائش ہیں؟ امریکہ کے engineering professors میں سے 40%غیر ملکی ہیں؟کیا آپ جانتے ہیں کہ امریکہ کے تمام billion-dollar startupsکا51% مہاجرین نے بنایا ہے؟کیا آپ جانتے ہیں کہ پورے امریکہ میں معقول سائز کا ایک بھی ہسپتال آپ کو ایسا نہیں ملے گا جس میں کو ئی مہاجر ڈاکٹر نا ہو؟کیا آپ کو معلوم ہے کہ امریکہ کی ایک بھی کنسٹرکشن سائٹ آپ کو ایسی نہیں ملے گی جہاں کو ئی میکسیکن، Hispanic یا جنوبی امریکہ کا مزدور نا ہو؟کیا آپ جانتے ہیں کہ امریکہ نے اکیلے سال 2015میں پوری دنیا کے لیے تقریباََ 2.3ملین نوکریاں نکالی تھیں جن میں فی گھنٹہ ایک ڈالر یا اُس سے بھی کم ملتا تھا؟
کیا آپ کو پتہ تھا کہ کُل مہاجرین کا13.3%امریکہ کی اعلیٰ اور ماہر افرادی قوت کا3%ہے؟کیا آپ کو یہ معلوم تھا کہ امریکہ کی رئیل اسٹیٹ اور پراپرٹی کی قیمت کو چلانے والے پناہ گزین اور مہاجر ہیں؟کیا آپ جانتے ہیں کہ امریکہ کی سائنس اور انجینئیرنگ کی جدّت پسندی میں24%گریجویٹ اور47%پی ایچ ڈی مہاجرین حصّہ دار ہیں؟کیا آپ کو معلوم ہے کہ امریکہ کے سائنس اور انجینئیرنگ کی افرادی قوت کے کُل اضافے کا آدھا صرف مہاجرین ہیں؟کیا آپ جانتے ہیں کہ امریکہ کی دس بڑی کمپنیوں میں ایسی 20,000نوکریاں ہیں جو مہاجرین کر سکتے ہیں؟کیا آپ جانتے ہیں کہ STEMپروگرام میں امریکہ میں پیدا ہونیوالوں کی تعداد سال1985میں74%تھی جو سال 2006میں کم ہو کر 54%رہ گئی ہے؟کیا آپ کو یہ پتہ تھا کہ صرف Fortune 500 companiesمیں سے40% مہاجرین کی پہلی یا دوسری نسل نے بنائی ہیں جن میں تقریباََ دس ملین لوگ نوکریاں کرتے ہیں اور جو سالانہ4.2ٹریلین ڈالر کی آمدنی پیدا کرتی ہیں؟کیا آپ جانتے ہیں کہ دس میں سے ساتھ گلوبل برانڈز مہاجرین کی ہی پہلی یا دوسری نسل نے بنائے ہیں جن میںe Appl، AT&T، Google, GE، IBM، Marlboro اور McDonaldsشامل ہیں؟
کیا آپ کو یہ پتہ تھا کہ ٹاپ25ٹیک کمپنیز کا 60%مہاجرین نے بنایا ہے؟ یا آپ یہ جانتے ہیں کہ امریکہ کی کینسر ریسرچ سینٹر کے42%سائنسدان امریکہ میں پیدا نہیں ہوے تھے؟ کیا آپ کو معلوم ہے کہ اکیلا H1B ویزہ ہولڈر امریکہ میں پیدا ہونیوالوں کے لیے پانچ نوکریاں نکالتا ہے؟ کیا آپ جانتے ہیں کہ ایک اندازے کے مطابق امریکہ کی معیشت کو چلانے والے15%مہاجرین ہیں؟ کیا آپ کو پتہ ہے کہ امریکہ کے صرف ہیلتھ کئیر سیکٹر میں 1.8 million لوگ امریکہ کے علاوہ اور کسی ملک میں پیدا ہوے تھے؟ کیا آپ کو یہ پتہ تھا کہ امریکہ کے60%غیر ملکی طلباء نے STEM میں داخلہ لیا ہے؟یا آپ کو یہ پتہ تھا کہ انجیینئر نگ کے55%پی ایچ ڈی طلباء، امریکہ میں کام کرنیوالےPhD physicists کا45%، امریکہ کی Math Olympiad team کے 50%، US Physics team کے30%، Intel Science talent search team کے25%، ٹاپ سائنس طلباء میں 60%، ٹاپ میتھ طلباء میں 65% اور اس کے ساتھ ساتھ post-doctoral chemical and mechanical engineeringکی افرادی قوّت کا 80%امریکی نہیں بلکہ غیر ملکی پیدائش ہے؟ اور کیا آپ کو پتہ تھا کہ Rice اور Carnegie Mellon University سے تعلیم پانے والے70%غیر ملکی ہیں اور اگر San Diego State یا Texas A&M جیسے تعلیمی اداروں کانام لیا جائے تو وہاں تو یہ تعداد94%تک کا پہنچتی ہے۔ اور کیا آپ کو معلوم ہے کہ Sachs, DuPont, CapitalOne، Pfizer، Merck، OmniCare، Sun Microsystems Google، Intel, Verizon, eBay, AT&T، Qualcomm، Comcast, Kraft، Sara Lee، Kohl146s، Chobani،Nordstrom، P&G، TJX Honeywell، Big Lots، BJ146s، Radio Shack، General Dynamics،Cigna، Eaton، Fidelity میں کیا قدر مشترک ہے؟ جو قدر مشترک ہے وہ یہ کہ ان سب کو بنانے والے مہاجرین ہیں؟
ان سب کے باوجود ہم عورتوں کی عزت لوٹنے والے ہیں، ہمیں امریکہ میں بین کر دینا چاہیے،۔ ہم اپنی جان مارتے ہیں تا کہ امریکہ ترقی کر سکے۔ہم کام زیادہ کرتے ہیں اور ہمیں امریکیوں کی نسبت کم پیسے ملتے ہیں۔ہمیں ائیر پورٹ پر بغیر کسی وجہ کے randomly سیکیورٹی کلئیرنس کے لیے روکا جاتا ہے۔ میری طرف دیکھیں میں ایک پڑھا لکھا، داڑھی والا مسلمان ہوں جس نے امریکہ میں ملنے والے مواقع کے لیے اپنا سب کچھ پیچھے چھوڑا ہے۔میرے پاس وہ سب کچھ ہے جو امریکی چاہتے ہیں۔۔ تعلیم، مواقع، برداشت، بہتر زندگی، آزادیِ اظہار، انصاف اور انسانیت۔ ہم امریکہ اسلیے نہیں آتے کہ ہمارا مذاق اُڑایا جائے، یا ہم پر سیاست چمکائی جائے یا پھر اپنی مرضی کے مطابق ہم پر لیبل لگائے جائیں۔
امریکہ نے ایک لمبا عرصہ سپریم طاقت ہونے کا مزا لوٹاہے، اب وقت آگیا ہے کہ ہمیں امریکہ سے اپنی راہیں جدا کر لینی چاہئیں۔ میرے ملک میں جو کچھ ہوتا ہے اُس میں کہیں نا نہیں امریکہ کا کردار ہوتا ہے۔ اب ہمیں اپنے مسئلے خود سلجھانے چاہیئیں اور ایسا کرنے میں ہماری مدد صرف ڈونلڈ ٹرمپ ہی کرسکتا ہے۔ وہ وہاں ہمیں نہیں آنے دے گا تو ہی ہم اپنے ملک کی طرف دیکھیں گے۔ اور اچھا ہے کہ امریکہ کو بھی پتہ چلے کہ آج جو امریکہ ہے اُس کو وہ بنانے میں ہماری کتنی محنت تھی۔ اپنے خودکے بیٹے کو صرف مسلمان ہونے کی وجہ سے تشدد کا نشانہ بنتے دیکھا ہے میں نے، یہ وہ امریکہ نہیں جہاں میں اپنی فیملی کو رکھنا چاہوں گا۔ اب بہت ہو چکا۔ اور اس بیماری کا ایک ہی علاج ہے اور وہ یہ ٹرمپ کو ووٹ دیا جائے تا کہ امریکہ کو نظر آئے جو کہ جو چیز اپنی ہے بھی نہیں اُس کے لیے تکلیفیں اُٹھانا کیسا ہوتا ہے، ٹرمپ ضرور امریکہ کو عظیم سے عظیم تر بنائے گا۔ ٹرمپ کو ووٹ دیتے ہیں کیونکہ اُس کو امریکہ کا صدر بنتے دیکھنا بھی کسی انٹرٹینمنٹ سے کم نہیں۔
امریکہ کا خدا ہی حافظ ہو،،، میرے ووٹ کا حقدار تو ٹرمپ ہی ہے۔

loading...

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *