وہ شخصیات جنہوں نے خود ہی اپنا مستقبل داؤ پر لگا دیا

639

ایک کہاوت مشہور ہے کہ ہر عروج کو زوال ہے لیکن بعض ایسی شخصیات ہوتی ہیں جو عروج پر پہنچنے کے بعد اپنی کسی بُری عادت یا معمولی سے لالچ کی وجہ سے اپنے مستقبل کو خود تباہ کردیتی ہیں۔

آج ہم ایسی ہی شخصیات کا ذکر کریں گے جنہوں نے اپنے فن اور خوبیوں کی بدولت نہ صرف بے تحاشا نام کمایا بلکہ خوب مال بھی بنایا لیکن دیکھتے ہی دیکھتے وہ آسمان سے زمین پر بھی آگئیں۔

1- پاؤلا ڈین (شیف)

نامور ٹی وی شیف پاؤلا ڈین اپنے زمانے کی مقبول ترین شیف تھیں لیکن اخبار میں چھپنے والے ایک آرٹیکل نے ان کی تمام مقبولیت کا خاتمہ کردیا، آرٹیکل میں ثبوت پیش کئے گئے کہ ماضی میں نامور ٹی وی شیف نسلی تعصب کا برملا اظہار کرچکی ہیں جو انتہائی خطرناک ہے۔

2- بوائے جارج (گلوکار)

نامور برطانوی گلوکار بوائے جارج نے اپنی گلوکاری کی بدولت لاکھوں ڈالر کمائے لیکن نشے کی لت نے انہیں اپنے بینڈ اور محبوبہ، دونوں سے دور کردیا جس کے بعد وہ گلوکاری سے کچھ عرصہ تک کنارہ کش رہے؛ اور پھر انہوں نے ڈی جے کی حیثیت سے اپنے نئے کیریئر کا آغاز کیا لیکن نشے کی لت نے یہاں بھی ان کا پیچھا نہ چھوڑا اور 2005 میں نیویارک میں انہیں منشیات رکھنے کے الزام میں گرفتار بھی کیا گیا جس کے بعد وہ کبھی نہ اٹھ سکے۔

3- چارلی شین (اداکار)

اداکار چارلی شین اپنی چنچل اداکاری کی بدولت بہت مقبول تھے لیکن کثرت شراب کی وجہ سے انہیں اپنے زمانے کی مشہور ڈرامہ سیریل ’’ٹو اینڈ اے ہاف مین‘‘ سے نکال دیا گیا۔ ڈرامے سے نکالے جانے کے بعد انہیں شدید ذہنی دباؤ کا سامنا کرنا پڑا اور اس کے بعد وہ نہ سنبھل سکے۔

4- اظہرالدین (کرکٹر)

بھارتی کرکٹ ٹیم کے مایہ ناز سابق کپتان اظہرالدین کو 2000 میں میچ فکسنگ اسکینڈل میں ملوث پائے جانے کے بعد تاحایات پابندی کا سامنا کرنا پڑا لیکن 2012 میں ان پر لگائی گئی یہ پابندی اٹھا لی گئی۔ مگر تب تک بہت دیر ہوچکی تھی جس کے بعد وہ کبھی کرکٹ میں نہ آئے۔

5- لنڈسے لوہان (اداکارہ)

ہالی ووڈ کی نامور اداکارہ لنڈسے لوہان کے کیریئر کو اس وقت بہت بڑا جھٹکا لگا جب وہ منشیات اور شراب نوشی کے استعمال میں بہت آگے نکل گئیں؛ اور ان کی یہ عادت اخبارات کی سرخیوں کا حصہ بھی بنتی رہی جس نے ان کے کیریئر کو شدید نقصان پہنچایا۔ اداکارہ کی نشے کی لت کی وجہ سے ہدایت کاروں نے انہیں اپنی فلموں میں کام دینے سے صاف انکار کردیا اور اب تک انہیں نشے کی اسی عادت کی وجہ سے شدید مشکلات کا سامنا ہے۔

6- جسٹن بائبر ( گلوکار)

جسٹن بائبر نے کم عمری میں گلوکاری سے خوب شہرت اور پیسہ کمایا لیکن اپنے غصیلے اور مشتعل مزاج کی وجہ سے انہیں اپنے کیریئر میں شدید رکاوٹوں کا سامنا ہے جب کہ ماہرین کا کہنا ہے کہ جسٹن بائبر کی مداحوں سے حقارت برتنے والے رویّے کی وجہ سے ان کی فلمیں بھی کامیاب نہیں ہورہیں۔

7- سری سانتھ (کرکٹر)

سابق بھارتی فاسٹ بولر سری سانتھ کو 2013 میں آئی پی ایل کے ایک میچ کے دوران اسپاٹ فکسنگ میں ملوث پایا گیا جس کے بعد ان پر تاحیات پابندی لگا دی گئی۔ 2011 میں بھارتی ٹیم نے ورلڈ کپ اپنے نام کیا اور سری سانتھ بھی اسی ٹیم کا حصہ تھے؛ اپنی ٹیم کی جیت میں انہوں نے اہم کردار ادا کیا تھا۔ کرکٹ کے دروازے ہمیشہ کے لئے بند ہونے کے بعد سری سانتھ نے گلوکاری میں قسم آزمانے کی کوشش کی لیکن اس میں لوگوں کو متاثر نہ کرسکے۔

8- ٹیٹم اونیل (اداکارہ)

10 سال کی عمر میں اکیڈمی ایوارڈ حاصل کرنے والی اداکارہ ٹیٹم اونیل نے ہالی ووڈ انڈسٹری میں اپنی دھاک بٹھائی ہی تھی کہ وہ ہیروئن اور الکحل کی لت میں پڑ گئیں اور اپنی اسی عادت کی وجہ سے وہ اپنے کیریئر کا خاتمہ کرچکی ہیں۔

9- سنجے دت (اداکار)

بالی ووڈ میں سنجے بابا کے نام سے مشہور اداکار سنجے دت ان دنوں جیل میں قید ہیں جنہوں نے اپنے کیرئیر میں کئی عروج و زوال دیکھے۔ بالی ووڈ کو سپرہٹ فلمیں دینے والے سنجے دت کو 21 مارچ 2013 کو عدالت نے 1993 کے ممبئی فسادات کے دوران غیرقانونی اسلحہ رکھنے کے جرم میں 5 سال قید کی سزا سنائی جس کے بعد انہیں کئی سائن کردہ فلموں سے ہاتھ دھونا پڑا۔

10- سلمان بٹ (کرکٹر)

پاکستان کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان سلمان بٹ 2010 تک اپنے کیرئیر کی بلندیوں پر تھے لیکن دورہ انگلینڈ میں انہیں اسپاٹ فکسنگ کیس میں ملوث پایا گیا جس کے بعد انٹرنیشنل کرکٹ کونسل نے انہیں 10 سال کرکٹ سے دوری کی سزا دی جس میں سے 5 سال کی سزا وہ کاٹ چکے ہیں تاہم اب ان کی کرکٹ میں دوبارہ واپسی ایک سوالیہ نشان ہے۔

11- محمد آصف (کرکٹر)

پاکستان کے فاسٹ بولر محمد آصف اپنی تیز رفتار ہوا میں گھومتی گیندوں سے مشہور تھے لیکن انہیں 2010 میں اسپاٹ فکسنگ کیس میں 5 سال کی سزا کا سامنا کرنا پڑا اور سزا مکمل ہونے کے بعد وہ ایک مرتبہ پھر اپنا کھویا ہوا مقام حاصل کرنے کی کوششوں میں مصروف ہیں:۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *