داعش کا اسرائیل سے معافی مانگنے کا انکشاف منظرعام پر!

Image result for ‫داعش اسرائیل‬‎

تل ابیب -شدت پسند تنظیم داعش اپنی بربریت کے حوالے سے تو شہرت رکھتی تھی لیکن اب اس کے متعلق ایک ایسا حیران کن انکشاف منظرعام پر آ گیا ہے کہ یقین کرنا مشکل ہو جائے۔ میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق اسرائیل کے ایک سابق وزیردفاع نے انکشاف کیا ہے کہ ”داعش نے گزشتہ سال نومبر میں اسرائیلی فوجیوں پر حملہ کرنے پر اسرائیل سے معافی مانگ لی ہے۔“
سابق اسرائیلی وزیردفاع موشے یعلون کا کہنا تھا کہ داعش کے شدت پسندوں نے اسرائیلی فوجیوں پر یہ حملہ گولان کی پہاڑیوں میں کیا تھا جو شام کی سرحد پر واقع ہیں۔ اس حملے کے بعد اسرائیلی فوج اور شدت پسندوں میں جھڑپ ہوئی تھی جس میں داعش ہی کے4شدت پسند ہلاک ہو گئے تھے۔ اس حملے کے فوری بعد داعش نے اسرائیل سے معافی مانگ لی تھی۔ رپورٹ کے مطابق اسرائیلی فوج نے موشے یعلون کے اس بیان پر ردعمل دینے سے انکار کر دیا ہے۔ اسرائیلی قوانین کے تحت کسی بھی دہشت گرد گروپ سے کسی بھی طرح کا رابطہ رکھنا قانوناً جرم ہے، لہٰذا یہ سوال پیدا ہوتا ہے کہ پھر داعش نے اسرائیل سے کس وسیلے سے معافی مانگی؟یہاں یہ امر بھی قابل ذکر ہے کہ 10سال داعش میں رہنے والے جرمن شخص یرجن تودن ہوفر (Jurgen Todenhofer)نے کچھ عرصہ قبل انکشاف کیا تھا کہ ”اسرائیل دنیا کا واحد ملک ہے جس سے داعش ڈرتی ہے۔ داعش کی قیادت سمجھتی ہے کہ اسرائیلی فوج بہت زیادہ طاقتور ہے اور وہ اس کا مقابلہ کرنے کی سکت نہیں رکھتے :-“

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *