بھارت نے پاک فوج پر انتہائی گھناؤنا الزام لگادیا!

انڈین فوج کے بیان کا عکس

انڈیا نے دعویٰ کیا ہے کہ پاکستانی فوج نے اس کے زیرِ انتظام کشمیر میں گشت کرنے والی فوجی پارٹی پر حملہ کر کے دو فوجیوں کو ہلاک اور ان کی لاشیں مسخ کر دی ہیں۔ انڈین فوج کی شمالی کمان کی جانب سے پیر کو جاری کیے گئے بیان کے مطابق یہ واقعہ لائن آف کنٹرول پر کرشنا گھاٹی سیکٹر میں پیش آیا۔

بیان کے مطابق پاکستانی فوج نے پہلے ایل او سی پر قائم انڈین فوج کی دو فارورڈ چوکیوں پر بلااشتعال مارٹر گولے اور راکٹ داغے اور پھر ساتھ ہی پاکستانی 'بارڈر ایکشن ٹیم' نے ان چوکیوں کے درمیان گشت کرنے والے فوجیوں پر حملہ کر دیا۔ انڈین فوج نے اس حملے میں مرنے والوں کی تعداد تو نہیں بتائی تاہم دعویٰ کیا ہے کہ اس حملے میں پاکستانی فوجیوں نے دو فوجیوں کی لاشیں مسخ کر دیں۔

بیان میں اس مبینہ اقدام کو عسکری روایات کے منافی قرار دیا گیا ہے اور کہا گیا ہے کہ پاکستانی فوج کی اس قابلِ نفرت حرکت کا مناسب جواب دیا جائے گا۔انڈین فوج نے بیان میں ہلاک ہونے والے فوجیوں کی شناخت ظاہر نہیں کی ہے۔ پاکستان کی فوج کی جانب سے اس واقعے کے بارے میں تاحال سرکاری طور پر کوئی بیان سامنے نہیں آیا ہے تاہم عسکری ذرائع نے انڈین فوج کے دعوے کو پروپیگنڈا قرار دیا ہے۔ایل او سی

انڈیا کی جانب سے پاکستان پر اپنے فوجیوں کی لاشوں کی بےحرمتی کے الزامات پہلے بھی لگائے جاتے رہے ہیں اور پاکستانی حکام ان الزامات کی تردید کرتے رہے ہیں۔ گذشتہ سال نومبر میں انڈیا نے پاکستان پر کنٹرول لائن کے قریب ہی تین انڈین فوجیوں کو مارنے اور ان میں سے ایک کی لاش مسخ کرنے کا الزام لگایا تھا۔ اس سے قبل30 اکتوبر 2016 کو کو بھی مندیپ سنگھ نامی فوجی کی ہلاکت کے بعد ان کی لاش کو نقصان پہنچانے کا الزام لگایا گیا تھا.

خیال رہے کہ انڈین فوج کی جانب سے پاکستانی فوج پر کشمیر کو تقسیم کرنے والی لائن آف کنٹرول کے علاقے میں حملے کا یہ الزام ایک ایسے وقت میں لگایا گیا ہے جب ترکی کے صدر رجب طیب اردوغان انڈیا کے دورے پر ہیں۔ طیب اردوغان نے اپنے دورے کے آغاز سے قبل ایک انڈین ٹی وی کو دیے گئے انٹرویو میں نہ صرف انڈیا کی حکومت پر زور دیا کہ وہ پاکستان کے ساتھ مذاکرات کا سلسلہ بحال کرے بلکہ اس سلسلے میں ثالثی کی پیشکش بھی کی تھی۔

ان کا کہنا تھا کہ 'ہمیں مزید ہلاکتیں نہیں ہونے دینی چاہییں۔ کثیر الملکی بات چیت کے ذریعے جس میں ہم بھی شریک ہو سکتے ہیں ہمیں اس مسئلے کو ہمیشہ کے لیے حل کرنے کی کوشش کرنی چاہیے۔' انڈیا پہنچنے کے بعد بھی اپنے ایک بیان میں انھوں نے کہا ہے کہ تنازعات کو طول دینا اور انھیں مستقبل میں لے جانا آئندہ نسلوں کے ساتھ ناانصافی ہوگی کیونکہ اس کی قیمت انھیں چکانی پڑے گی :-

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *