نئے شناختی کارڈ کی حیرت انگیز چیزیں

قدیر تنولی

id

اسلام آباد۔ کمپیوٹرائزڈ شناختی کارڈ میں ایک عام آدمی کی سمجھ سے کہیں زیادہ معلومات شامل ہوتی ہیں۔ خاص طور پر شناختی کارڈ نمبر کے پہلے 5 اور آخری عدد بہت ہی اہم معلومات کا خزانہ رکھتے ہیں۔

جب اس کو ڈی کوڈ کیا جاتا ہے تو بہت دلچسپ معلومات دیکھنے کو ملتی ہیں۔ شناختی کارڈ کے پہلے پانچ اعداد بہت خاص اہمیت کے حامل ہیں جس سے کارڈ ہولڈر کی پوری معلومات کا پتہ لگایا جا سکتا ہے۔

شناختی کارڈ نمبر کا پہلا عدد اس کے سکونتی صوبے کو ظاہر کرتا ہے۔ اگر آپ کا شناختی کارڈ نمبر 1 سے شروع ہوتا ہے تو اس کا مطلب آپ کا تعلق خیبر پختونخواہ سے ہے۔

2 کا مطاب فاٹا، 3 پنجاب، 4 سندھ، 5 بلوچستان، 6 اسلام آباد اور 7 گلگت بلتستان سے تعلق ہے۔

پہلے پانچ نمبروں میں سے دوسرا نمبر ڈویژن، تیسرا ڈسٹرکٹ، چوتھا تحصیل اور پانچواں یونین کونسل کی طرف اشارہ کرتاہے۔

نادرا ذرائع کے مطابق سی این آئی سی نمبر کے بیچ کے اعداد کو بغیر کسی خصوصی اہمیت کے منتخب کیا جاتا ہے لیکن 13واں اور آخری نمبر انسان کی جنس کو ظاہر کرتا ہے۔

مرد حضرات کو طاق جب کہ خواتین حضرات کو جفت نمبر جاری کیے جاتے ہیں۔

نادرا ٹرانس جینڈر حضرات کو بھی شناختی کارڈ جاری کرتا ہے جس میں کارڈ بنوانے والا شخص اپنی مرضی سے مرد یا عورت کی جنس کا انتخاب کرتا ہے۔ دونوں جنس سے تعلق رکھنے والے افراد کو طاق یا جفت نمبر سے ان کی جنس کو ظاہر کیا جاتا ہے۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *