ایک متوقع منظرنامہ

سلیم فاروقی

saleem farooqi

مجھے نوازشریف کی ذات سے کوئی دلچسپی نہیں، جو بویا ہے سو کاٹنا بھی چاہیے۔لہٰذا ممکن ہے نوازشریف پانامہ کیس میں نااہل ہوجاتے ہیں۔ اب ذرا آگے کا منظرنامہ سوچیں اور میری رہنمائی کریں کہ اس کے بعد کیا ہوگا؟؟؟

سب سے پہلے نوازشریف کو عدالت نے نااہل قرار دیا…

اس کے ساتھ ہی عمران خان کو الیکشن کمیشن نااہل قرار دے دیتا ہے…

نون لیگ باقی مدت دوسرے وزیراعظم کے ساتھ پوری کرنے کے بعد اگلے سال ختم ہو جاتی ہے…

نئے انتخابات میں نون لیگ زرداری کے کاغذات نامزدگی کو غلط اثاثوں کی بنیاد پر چیلنج کرتی ہے اور زرداری بھی نااہل قرار پاتے ہیں…

الطاف حسین پہلے ہی معتوب ہیں، ان کی جماعت کا انتخاب الطاف کے ہی نام پر لڑنا ناممکن ہوجاتا ہے۔

گویا ملک کی چار بڑی جماعتیں مائنس ون کا شکار ہوجاتی ہیں۔ ایسے میں انتخاب کا کیا نتیجہ نکلے گا؟

کوئی روشنی ڈالے گا اس منظرنامہ پر، آنے والی حکومت بظاہر کسی ایک جماعت کی بجائے بھان متی کا کنبہ ٹائپ ہوسکتی ہے۔ کیا وہ حکومت مستحکم ہو سکتی ہے؟ اگر نہیں تو پھر ملک میں جو تماشہ لگے گا وہ تو رہا ایک جانب، بس یہ بتائیں اس سے اگلے انتخابات کون سے سال میں ہونگے۔

اور اہم ترین سوال یہ کہ کیا آنے والی حکومت کرپشن کے خلاف جہاد کو اسی طرح جاری رکھ پائے گی؟

اگر نہیں تو اس ہنگامہ خیزی کا ملک کو کتنا فائدہ یا کتنا نقصان ہوگا؟

کیا واقعی اس ملک سے کرپشن ختم ہوجائے گی، یا کم از کرپشن کے خاتمے کی ابتداء ہی ہوجائے گی؟؟؟

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *