مجھ سے اس بینچ کے ایک جج نے درخواست کی تھی کہ آپ عدالت میں کیس لائیں اور...

Image result for ‫عمران خان‬‎

اسلام آباد -پاناما کیس میں عدالت عظمیٰ نے وزیراعظم کو نااہل قراردے کر گھر بھیج دیا جس کا نوٹیفکیشن بھی جاری کردیاگیا اور اب حکمران جماعت نے نئے وزیراعظم کا نام بھی فائنل کرلیا تاہم پاناما کیس کے درخواست گزار عمران خان کے انکشاف نے سوشل میڈیا پر تہلکہ برپا کردیا، عمران خان نے نجی ٹی وی چینل سے گفتگو میں کہاکہ پاناما کیس کا فیصلہ سنانے والے بینچ کا حصہ جسٹس کھوسہ نے ان سے درخواست کی تھی کہ آپ کیس عدالت لائیں۔


اے آروائے نیوز کے پروگرام ’پاورپلے‘ میں میزبان ارشدشریف کے سوال ’پاناما فیصلے کے بعد آپ کا عدلیہ پراعتماد بڑھا ہے؟‘ کے جواب میں عمران خان نے کہاکہ جب ہم نے یکم نومبر 2016ءکو دونومبر کو دس لاکھ لوگوں کے ہمراہ اسلام آباد لاک ڈاﺅن نہ کرنے کا فیصلہ کیا کہ ہم عدلیہ یعنی سپریم کورٹ میں جائیں گے، تومیری پارٹی اور میڈیا میں بڑی تنقید تھی ، ہرطرح کی چیز ہوئی جیسے یوٹرن، ہم نے جب فیصلہ کیاتو مجھے یاد ہے کہ یکم نومبر کویہ عدلیہ بیٹھی تھی تومجھے سپریم کورٹ کے جج نے ریکوئسٹ کی تھی کہ بجائے سڑکوں کے عدلیہ میں آئیں۔

ارشدشریف نے سوال کیا کہ کیا وہ ریٹائرڈ جج تھے تو عمران خان نے کہاکہ ’ نہیں نہیں،یہ جو بینچ تھا، شاید جسٹس کھوسہ نے کہاتھا ، یکم کو بینچ بیٹھنے کے بعد ہم نے فیصلہ کیا کہ دو نومبر کو کال آف کررہے ہیں، ریکوئسٹ کی تھی کہ آپ عدالت میں آئیں، میں آئین اور جمہوریت پر یقین رکھنے والا آدمی ہوں‘۔عمران خان نے کہاکہ مجھے پتہ تھا کہ اگر ہم عدالت میں نہ جاتے تو وہ، آپ کو پتہ ہے کہ پہلے ہمارا کیس ہی باہر پھینک دیاتھا، پارلیمنٹ میں بھی کوئی شنائی نہیں تھی۔ انہوں نے مینیج کی ہوئی تھی۔ اسپیکر نے نوازشریف کے ریفرنس کی بجائے میرا ریفرنس بھیج دیا، سپریم کورٹ نے جب کہاتو میراخیال تھا کہ یہی طریقہ ہے کہ جمہوری طریقے سے احتساب کرسکیں :-

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *