ہم عورتیں آپ سے زیادہ ذہین ہیں

Seemi Kiran

ویسے آپ مان لیجئے کہ ہم عورتیں آپ مردوں سے کہیں زیادہ ذہین واقع ہوئی ہیں ۔

مسائل کا ادراک کرنے ، اسکے مطابق پالیسی مرتب کرنے ، خود کو ڈھالنے میں ہماری صلاحیت کا آپ سے کیا مقابل؟!

اب آپ میرے اس گستاخانہ بیانیے پہ چیں بچیں ہوں ، غصے سے بل کھائیں ، مونچھوں کو تاؤ دیں کوئی الزام دھریں ، لڑیں ۔۔۔۔۔ مگر اسکے علاوہ آپ اور کر کیا سکتے ہیں ؟ اب تک آپ نے کیا بھی تو یہی ہے !

مگر آپ کو صبر سے میری بات سننی تو پڑے گی !

آخر ہم نے بھی تو اتنے زمانوں سے "عورت دی مت گُت پچھے" ، کم عقل ، آدھی گواہی وغیرہ وغیرہ کے قسم کے متعصبانہ محاورے سن کر خود کو منوایا ہے !

نہ ۔۔۔۔۔ نہ مسئلہ عورت مرد کا نہیں ۔۔۔۔

میں اس نتیجے پر کچھ اور ہی دیکھکر پہنچی ہوں !

آپ کی نظر سے بھی ایسے بہت سے گھر گزرے ہوں گے !

جانے سوچ کا در آپ پہ کبھی وا ہوا یا نہیں !

مگر کل میں ایسے ہی ایک اور گھر سے آکر لگاتار سوچ میں مبتلا ہوں !

میں نے عموماً ۔۔۔۔۔ استثنائی کینسر کے علاوہ ۔۔۔۔۔ اس فارمولے کو گھروں میں دیکھا اور کامیاب پایا ہے !

میں نے ایسے بہت سے گھر دیکھے ہیں جہاں ساس ظالم ، جابر اور غاصب ہو اور بہویں ایک سے زائد ہوں تو وہ ساس کے خلاف اِک متحدہ محاذ بنا کر مورچہ بند ہو جاتی ہیں !

اب ساس لاکھ انگریزوں کی "تقسیم کرو اور حکومت کرو " کے مقولے پر عمل درآمد ہونے کی کوشش کرے اسکی تمام تر فسادنہ ، غاصبانہ پالیسز اس متحدہ محاذ کے سامنے دم توڑ دہتی ہیں !

اور آہستہ آہستہ ۔۔۔۔۔ بتدریج گھر کی حکومت ، امور ، چابیاں نچلے لیول تک اختیارات بہوؤں میں تقسیم ہونے لگتے ہیں !

ساس کو پسپا ہونا پڑتا ہے !

وہ بظاہر بی حاجن بن ۔۔۔۔۔ ہاتھ میں تسبیح پکڑ مصلے پہ بیٹھ تو جاتی ہے ۔۔۔۔۔ مگر اسکی عقابی نگاہیں اس رخنے کو تلاش کرتی رہتی ہیں

مگر آفرین ہے بہوؤں کے متحدہ محاذ پر !

وہ آپس میں ایک دوسرے سے لاکھ حسد کریں اختلاف کریں !

ایک دوسرے سے مقابلے کا یہ عالم ہو کہ جیٹھانی کے بچے کے نمبر زیادہ آنے پر دیورانی کے کمرے کی بتی ساری رات جلے !

یا پھر بچوں کو اس بات پر ڈانٹ پڑ جائے کہ کم بخت چاچی یا تائی کے سوٹ ۔۔۔۔۔ کھانے یا سلیقے کی تعریف سب کے سامنے کیوں کر دی ؟!

مگر مجال ہے کہ بھاپ کو ساری تو کیا ذرا سی آنچ بھی ساس تک پہنچ پائے !

اس کے سامنے وہ سیسہ پلائی دیوار ہی ثابت ہوتی ہیں !

جو ایک دوسرے کے رازوں ، کمزوریوں کی حفاظت بھی کرتی ہیں اور پردہ پوشی بھی !

تو جانیے کہ عورت کس قدر ذہین مخلوق ہے ؟!

وہ جبر اور ظلم کو اتفاق کے امن سے شکست دیتی ہے !

کیا یہ ہنر آپ کو آتا ہے ؟

نہیں نہ ۔۔۔۔۔ آپ نے تو بس لڑنا ، مرنا اور فساد پھیلانا ہی سیکھا !

آپ میں سے ہر کوئی عائشہ کے حمام میں ننگا ہے

اور اس سے بڑی حماقت ۔۔۔۔۔۔ بلکہ لطیفہ یہ ہے کہ ایک دوسرے کو حمام سے باہر دھکا دیکر کہتا ہے ۔۔۔۔۔۔ دیکھو ۔۔۔۔۔۔ دیکھو یہ بھی ننگا ہے تو آپ مان لیجئے نہ کہ عورت آپ سے بہت زیادہ ذہین ہے !

یہ حکومت وغیرہ آپکے بس کا کام ہی نہیں !

یوں بھی اب تک دنیا کی تاریخ میں آپ مردوں نے دنیا کو سوائے نفرت ، جنگ ، بدامنی ، ہتھیاروں کے علاوہ دیا ہی کیا ہے !

آپ یہ محاذ ہم عورتوں کے لئے کھلا چھوڑ دیجئے ہم آپکو بتائیں گے کہ دشمن کے سامنے ۔۔۔۔ جابر کے سامنے اتحاد و اتفاق کیسے بناتے ہیں !

سیاسی محاذ پہ یکجائی ۔۔۔۔۔ اہم ۔۔۔۔۔۔ سالمیت کے مقام پہ یکجائی اپنی انفرادی اکائی قائم رکھتے ہوئے کیسے قائم کی جاتی ہے !

ہم عورتیں ۔۔۔۔۔ یہ محاذ بنانا اپنی فطری دانش سے بغیر کوئی سبق پڑھے سیکھ جاتی ہیں !

ساس جو کہ لاکھ جابر اور ظالم ہوتی ہے ۔۔۔۔۔

مگر یاد رکھیے کہ ہوتی تو گھر کی اصل مالک ہے نہ ؟!

مگر آپ تو اسقدر نااہل ہیں کہ ملازمین کو حاکم بنا بیٹھے ہیں !

اور اپنے مالکوں میں دال جوتیوں میں بانٹ رہے ہیں !

آپ کیا خاک حکومت کریں گے ؟!

آپ نے تو اپنے مفادات کے تحت ہی نہ یکجا ہونا سیکھا ! نہ اتفاق ، اتحاد اور یکجائی کی طاقت کو آزمایا کہ کیسے جبر کو بغیر کسی جنگ کے اختیار اپنے ہاتھ میں لیا جا سکتا ہے !

جبکہ سامنے یا پس پشت اصلی اور حقدار حاکم بھی نہ ہو !

آپ ایسا کیجیے کچھ عرصہ چولہا چوکی کیجئے !

اور مان لیجئے کہ ہم آپ سے زیادہ ذہین ہیں !

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *