پرچہ حب الوطنی برائے سیاسی لیڈران 

naeem-baloch1

تمام سوالوں کے جواب ضروری ہیں ۔ عوامی رہنمائی کا سرٹیفکیٹ حاصل کرنے کے لیے کم از کم ساٹھ فیصد نمبر حاصل کرنا ضروری ہیں۔ یہ ایک ’’اوپن بک ‘‘ امتحان ہے ، آپ اپنے ضمیر کی کتاب کو سامنے رکھ کر جواب دے سکتے ہیں ۔آپ کاضمیر اگر اجازت دے تو نقل بھی کر سکتے ہیں ۔ جب تک ضمیر اجازت دے آپ لکھ سکتے ہیں ۔صرف سچائی کی روشنائی استعمال کریں ۔ سرخیاں دینے کی اجازت نہیں ، صرف پوچھی گئی بات کا جواب دیں ۔ یاد رکھیے کہ غیر متعلق اور غیر ضروری طوا لت پر منفی مارکنگ ہو گی ۔
1۔قیام پاکستان پر اگر کوئی کتاب پڑھی ہو تو اس کا نام لکھیں۔ اگر کتاب نہیں پڑھی تو یہ بتائیں کہ قائداعظم کے چودہ نکات یاد ہیں ؟ اگر یاد نہیں، تو کسی بھی دوسرے لیڈر سے پوچھ کر بتائیں ۔ اگر کسی کو بھی یاد نہیں تو کتاب سے یاد کرکے بتائیں اور یاد کرنے میں ناکامی ہوئی تو بتائیں انھیں طلبہ کو یاد کرنے کی اذیت کیوں دیتے ہیں ؟
2 ۔اگر آپ ہمہ وقت سیات دان ہیں تو سیاست کا علم بھی حاصل کیا ہوگا ۔ اگر اس سلسلے میں کوئی باقاعدہ تعلیم حاصل نہیں کی تو آپ سیاست کس سے سیکھ کر ،کر رہے ہیں ؟کیا اس مقصد کے لیے آپ نے کسی مشہوراور نیک نام سیاسی لیڈر کی آب بیتی، سوانح عمری پڑھی ہو ؟ اگر کوئی ناول پڑھا ہو یا اگر کوئی افسانہ ، کہانی یا کسی شاعر کی نظم اس قدر پسند آئی ہو کہ یاد کر لی ہو تو اس کے بارے میں بھی بتا سکتے ہیں۔
3۔ آپ نے قائد اعظم کی سیاسی بصیرت اور قائدانہ خوبیوں کا اپنی سیاسی بصیرت اور خوبیوں سے کبھی موازنہ کیا ؟ ا س حوالے سے کوئی قدر مشترک ہو تو اس کا ذکر کریں ۔ یاد رہے کہ اس سوال کا جواب دینے کے لیے آپ کو قائد اعظم کی شخصیت کے بارے میں معقول معلومات ہونی چاہییں ، اگر نہیں ہیں تو اس کا مطالعہ کر کے جواب دیں ۔
4۔ کبھی سخت موسم کے دوران آپ گاڑی یا موٹر سائیکل چلا رہے ہوں ، منزل پر پہنچنے کی جلدی بھی ہو لیکن وی آئی پی مومنٹ کے لیے آپ کو رکنا پڑے تو عام طور پر پہلی گالی کون سی ذہن میں آئے گی ؟ پوری گالی لکھنے کی ضرورت نہیں ، صرف ابتدائی ہجے لکھ دیں ۔ یاد رہے کہ صرف ایک اور پہلی گالی کے بارے میں پوچھا گیا ہے ، پوچھاڑ کرنے کی ہر گزضرورت نہیں ۔
5۔ کس حکمران کے دور میں کرنسی نوٹوں پر لکھا ہوتا تھا: ’’ حصول رزق حلال عین عبادت ہے‘‘۔یہ اب کیوں نہیں لکھا جاتا ؟ اسے کس حکمران کے دور میں ختم کیا گیا ؟کیا آپ نے یہ عبارت کبھی پڑھی تھی ؟ اگر پڑھی تھی تو اس کی تشریح میں صرف دو سطریں تحریر کریں ۔
6۔ دنیا کے ایک مشہور ملک کے کرنسی نوٹ پر لکھا ہوتا ہے (ترجمہ )’’ہم خدا پر یقین رکھتے ہیں ۔‘‘ ملک کا نام بتائیں ۔ کیا آپ اس ملک کو نظریاتی ملک کہہ سکتے ہیں ؟ اگر آپ کو ’’نظریاتی ملک ‘‘ کے مفہوم کا علم نہیں تو صرف اس کا تذکرہ کر دیں ، سچ بولنے پر حوصلہ افزائی کے نمبر ملیں گے ۔
7 ۔زندگی میں کتنی دفعہ آپ کو یہ شک ہوا کہ آپ جو دودھ یا پانی پی رہے ہیں ، یا دوا کھا رہے ہیں ، یافیکٹری میں بننے والی کوئی چیز کھا یا استعمال کر رہے ہیں وہ نقلی ہو سکتی ہے ؟ اگر کبھی اس طرف دھیان نہیں گیا تو اس کی کیا وجہ ہے ؟ اور اگر اس خوف سے گزرے ہیں تو اس کو چند الفاظ میں بیان کریں ۔ نوٹ : ( اس موقع پر غیر پارلیمانی زبان استعمال نہ کریں )
8 ۔ ملک بھر میں آپ نے خوب جھنڈے جھنڈیاں لگوائیں ہوں گی لیکن یہ بتائیں کہ کبھی اپنے ہاتھوں سے یوم پاکستان پر اپنے گھر میں کوئی جھنڈی لگائی ؟ کسی گری ہوئی جھنڈی کو کبھی ہاتھ سے اٹھا کر بے ادبی سے بچایا ؟
9 ۔اپنے سیاسی کارکنان کے لیے کبھی یہ دعا کی ہو کہ اللہ تعالیٰ انھیں ایمان داری، انصاف پسندی اور اصولوں کی بنیاد پر میری حمایت کی توفیق دے ۔ اگر اس سلسلے میں ان کی تعلیم و تربیت کا بھی اہتمام کیا ہو تو اس کاتذکرہ کریں ۔ اس کے نمبر دوگنا ملیں گے ۔
10 ۔اپنے گھرکا بجٹ اس طرح تحریر کریں کہ واضح ہو آپ کتنے فیصد کھانے پینے ، کپڑے لتے ، آنے جانے ، بچوں کی تعلیم و تربیت ، اپنے ملازمین کی فلاح و بہبود پر خرچ کرتے ہیں۔ اس سوال کا مقصد یہ جاننا ہے کہ آپ کی ترجیحات کیا ہیں ۔
11۔ مہینے کے اختتام پر یا کسی بچے کی شادی یا تعلیمی اخرجات یا کسی اور ضروری سہولت کے حصول پر اگر آپ کے پاس رقم کا بندوبست نہ ہو تو آپ کیا کرتے ہیں ؟اگر ایسی کبھی نوبت پیدا نہیں ہوئی تو کیا آپ نے کبھی سوچا ہے کہ پاکستان میں کتنے فی صد لوگ ایسے ہیں جنھیں ایسی صورت حال سے واسطہ پڑتا ہے ؟ کیا کبھی آپ نے ان لوگوں کے لیے ذاتی طور پر کوئی عملی اقدام اٹھانے کے بارے میں سوچا ہے ؟
12۔ پاکستان کا بجٹ ہمیشہ خسارے کا ہوتا ہے ۔ یعنی ہماری ملکی آمدنی کم اور اخراجات زیادہ ہوتے ہیں ۔ہم اس ضرورت کو قرضے لے کر پورا کرتے ہیں ۔ پھر اس پر سود بھی دیتے ہیں ۔ کیا آپ نے اپنے گھر یا کاروبار کو اس طرز پر چلایا ؟ یاد رکھیے آپ اپنے کاروبار کے قرضے تو اپنے سیاسی اثرورسوخ سے معاف کرا لیتے ہیں لیکن ملکی قرضے اتنی آسانی سے معاف نہیں ہوتے ۔ وہ اسی صورت میں معاف ہوتے ہیں جب آپ اپنی خارجہ پالیسی کو دوسروں کی مرضی پر ڈھالنے کے لیے اقدام کرتے ہیں ۔
13۔ کیا آپ کسی سیٹھ کی ایسی پیش کش کو قبول کر لیں گے کہ اس کے بدمعاش ، بدچلن یا انتہائی بدصورت اور نااہل لڑکے کے لیے اپنی پیاری بیٹی کا رشتہ قبول کر لیں اور وہ آپ کی مطلوبہ رقم یا کوئی اور شے نرم شرائط پر آپ کو دے دے ؟ اگر آپ کی کوئی بیٹی نہیں تو معاملہ انھی شرائط کے ساتھ برعکس کر لیں ۔ اس سوال پر آنکھیں نکالنے کی ضرورت اس لیے نہیں کہ کم از کم پاکستان کے غیر ملکی قرضے اسی طرح کی شرائط پر قبول کیے جاتے ہیں۔
14۔کیا آپ اپنے گھر کا امن و امان اسی طرح برباد کیے رکھتے ہیں جس طرح جلسے جلوسوں اور احتجاج اور ہڑتالوں سے ملک کا امن و امان غارت کیے رکھتے ہیں ؟یہ کام آپ حکمران ہوں یا نہ ہوں ، ہر دو صورتوں میں کرتے ہیں ۔
15۔ اگر آپ پاکستان کی جگہ کسی اور ملک میں پیدا ہوئے ہوتے تو اسی طرح کے کامیاب سیاست دان ہوتے ؟ ملک کا نام بھی بتائیں ۔ کسی ترقی یافتہ ملک کا نام بتانے کی ضرورت نہیں ، ہتک عزت کے مقدمے کا شدید اندیشہ ہو گا ۔
16۔( یہ سوال لازمی نہیں ۔ مگر درست جواب دینے والے کو نمبر ضرور ملیں گے۔)پاکستان کی اسٹیبلشمنٹ اگر سیاست پر اثر انداز نہ ہوتی تو سیاست دانوں کی کارکردگی اور صلاحیت پر مثبت اثر پڑتا یا منفی یا کوئی بھی فرق نہ پڑتا؟
نوٹ :ان سوالات کو خارج از نصاب قرار دینے والے سیاست دانوں کے خلاف عدالت میں مقدمہ درج کرایا جائے گا اور فاضل جج صاحبان سے گزارش کی جائے گی کہ کسی نہ کسی طرح ان پر صادق وامین والی شق عائد کر کے ان سے خلاصی حاصل کی جائے-

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *