سازشیوں سے نظرثانی کی اپیل

حماد احمد
hammad ahmed
میاں نواز شریف صاحب نے تاحیات نا اہلی کے بعد اپنی ہر تقریر میں سازش کا ذکر کیا کہ انکو بلاوجہ ہٹایا گیا، فیصلہ پہلے سے ہوا تھا، قوم ان کے ساتھ لیکن پانچ ججز نے ظلم کی نئی داستان رقم کی اور وغیرہ وغیرہ -خواجہ آصف و سعد سمیت نواز شریف کے قریب ترین جیالوں کا کہنا ہے سازش میں فوج کا ہاتھ تو دور انگلی تک بھی کوئی نہیں۔اسی طرح حامد میر نے بھی ایک پروگرام میں یہ تک کہا کہ نواز شریف کی تا حیات نا اہلی کے بعد نوے کے قریب ممبران اسمبلی نواز شریف سے الگ ہونے کو تیار تھے لیکن وہ اس انتظار میں تھے کہ کسی طرح فوج سے کوئی اشارہ مل جائے لیکن فوج نے صاف بتا دیا کہ بھئی ہمارا کیا کام اس سے ؟

یہ نہیں کہا جا سکتا کہ اس پورے معاملے میں فوج کا کوئی کردار نہیں نہ ایسا ممکن ہے بلکہ اصل بات یہ ہے کردار اگر کسی کا تھا تو وہ نالائق سابق فوجی افسران کا ، جنکی بزدلی سے پورا پاکستان واقف ہے ، جن کی طاقت بس اتنی سی ہے کہ پیمرا کو دھمکیاں دیں یا مخالف چینلز کو بند کروائیں یعنی پرویز مشرف گروپ۔
لیکن ان سے بڑے ڈرپوک "بھاری مینڈیٹ" والے مسلم لیگی ہیں جو اتنا تک نہیں بتا سکتے کہ نواز شریف کی ریلی کی کوریج سے کچھ چینلز کو کس نے روکا ؟حالانکہ وہ ریٹائرڈ افسران ہیں ان کا اب فوج یا آرمی چیف وغیرہ سے کوئی تعلق نہیں۔یہ مسلم لیگ کے لوگ ہمیں بتاتے رہتے ہیں کہ سابق فوجی افسران حکومت کے خلاف کچھ چینلز کو اکساتے رہتے ہیں۔لہذا یہ تو کلئیر ہوگیا کہ سازش میں فوج کا کوئی ہاتھ نہیں کیونکہ یہ خود مسلم لیگ کہہ رہی ہے اب رہ گئے پانچ ججز تو میاں صاحب نے اپنے "کروٹوں افراد کی ریلی" میں عوام کو جس کے خلاف انقلاب کیلئے اکسایا اور ایک نئی راہ دکھائی ایک نئی منزل کا اشارہ دیا میاں صاحب ان ہی کے پاس دوبارہ نظر ثانی کی اپیل کرنے تشریف لے گئے۔یعنی وہ انقلاب کیا ہوا جو آپ نے عوام کے فیصلے کو قبول نہ کرنے والوں کے خلاف برپا  کرنا تھا ، وہ عوام کی عدالت کیا ہوئی جہاں سے آپ کو تاحیات وزارت عظمی کا سرٹیفکیٹ ملا ؟

یقینا میاں صاحب نے اس بار بھی عوام کو بے وقوف بنانے کا پلان بنایا ہوا ہے۔ ویسے بھی عوام دل کی اچھی ہے جلدی معاف کردیتی ہے ، کرسی حاصل کرنے کے بعد میاں صاحب کہہ دیں کہ جوش خطابت میں منہ سے نکل گیا سو بھول جاو کہ کوئی جمہوریت ہوتی ہے کوئی اصول ہوتے ہیں عوام بھول جائے گی۔میاں صاحب کی تاریخ یہی ہے کہ وزیراعظم بننے سے پہلے جس قسم کے وعدے کرتے ہیں اور لوگوں کو نئی راہ دکھاتے ہیں وزیراعظم بن کر بالکل اس کے الٹ کام کرتے ہیں۔ہم نواز شریف سے اس بار بھی یہی امید رکھتے ہیں کہ ہم سب کو بے وقوف بنانے میں وہ کامیاب ہوجائیں گے۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *