تین ولولہ انگیزاعلانات

syed arif mustafa

مجھے یقین ہے کہ آپ یقین نہیں کرینگے لیکن خود میرے کانوں نے میرے دل کی زبان سے سنا ہے کہ امت مسلمہ کے مسائل پہ آئے دن ملین مارچ نکالنے والے سراج الحق نے عمران خان سے کے پی کے میں مظلوم و بے آسرا روہنگیا مسلمانوں‌ کو لا کے بسانے کا دوٹوک مطالبہ کیا ہے اور اسے فوراً تسلیم نہ کرنے پہ احتجاجاً 8 ماہ بعد کے پی کے کی صوبائی حکومت چھوڑ دینے کا ولولہ انگیز اعلان کردیا ہے اور چونکہ قومی الیکشن مئی 2018 میں منعقد ہونگے لہٰذا قوی امکان ہے کے 2018 کے الیکشن کے اعلان سے ایک ہفتہ قبل اس دھمکی پہ عملدرآمد ہوجائے گا-

اس کے ساتھ ہی دوسرا اعلان مولانا فضل الرحمان کی طرف سے کیا گیا ہے کہ چونکہ انکی دفاع افغان کونسل کی اپیل پہ غیرتمند مسلمان دنیا بھر کے کونے کونے سے تڑپ کے جہاد افغانستان میں شرکت کے لیئے آئے اور وہاں امریکا و دیگر طاغوتی سے بے جگری سے لڑے اور اب بھی لڑ رہے ہیں چنانچہ انکی اس جہادی تڑپ پہ شکریئے کے اظہار کے طور پہ اور جوابی طور پہ وہ اور انکی سرفروشوں‌سے لبریز جماعت کے مجاہد کسی نہ کسی طرح برما پہنچیں گے اور انکی جمیعت وہاں روہنگیا کے قاتلوں کے خلاف بھرپور جہاد کرے گی اور ان کا قلع قمع کرنے کے لیئےاپنے تمام اتحادیوں کی جانوں کا نذرانہ پیش کرنے سے ہرگز دریغ نہیں کرے گی اور کئی دہائیوں سے راسخ ہوتے اس تصور کو باطل کرکے رکھ دے گی کہ جہاد صرف پختون علاقوں کے لیئے مخصوص ہے

اور ہاں یہ اعلان بھی سن لیں کہ مئی تو ابھی دور ہے اسلیئے میں ہر برس، رمضان میں ہزاروں افراد کا شہر اعتکاف بسانے اور ہر آئے دن عظیم الشان جلسے کرنے والے طاہرالقادری کی جانب سے بلاتذبذب یہ اعلان کرتا ہوں‌ کہ وہ اور انکی جماعت روہنگیا کو لاہور اور پنجاب کے ان علاقوں میں لابسائے گی کہ جہاں پہ اسکے ماننے والوں کی اکثریت یہ ہے ۔۔۔ البتہ یہ کام صحافیوں‌ اور سول سوسائیٹی کو سونپا جاتا ہے کہ وہ دس سال کے اندر اندرانہیں انکے اکثریتی علاقوں کی تفصیل فراہم کریں-


arifm30@gmail.com

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *