خطے کی موجودہ صورتحال میں پاکستان کے ساتھ ہیں، چین

چین کا کہنا ہے کہ افغان مسئلے کا پرامن حل چاہتے ہیں اور افغانستان میں امن پاکستان، چین اور خطے کے مفاد میں ہے۔

بیجنگ میں پاکستان کے وزیر خارجہ خواجہ آصف اور چینی ہم منصب وانگ ژی کے درمیان ملاقات کے بعد مشترکہ پریس کانفرنس کے دوران چینی وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ پاکستان اور افغانستان خطے کے اہم ترین ممالک ہیں بیجنگ کی خواہش ہے دونوں ممالک کے عوام امن اور خوشحالی کے ساتھ آگے بڑھیں۔

وانگ ژی نے کہا کہ چین افغان مسئلے کا پرامن حل چاہتا ہے، پاکستان اور افغانستان کے درمیان اختلافات کم کرنے کی بھرپور کوشش کریں گے۔

وانگ ژی نے کہا کہ دہشت گردی ایک مشترکہ مسئلہ ہے جس سے نمٹنے کے لئے مشترکہ کوششیں کرنا ہوں گی اور چین پاکستان کے مفادات کا احترام کرتا ہے۔

دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پاکستان کی حمایت جاری رکھنے کے عزم کا اعادہ کرتے ہوئے چینی وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ پاکستانی عوام، حکومت اور فوج نے دہشت گردی کے خلاف لازوال قربانیاں دیں، پاکستان اور چین دفاعی و علاقائی سلامتی کے لئے ایک دوسرے سے بھرپور تعاون کریں گے۔

چینی وزیر خارجہ نے کہا کہ افغانستان پر امریکی پالیسی کا ہم نے گہرا مطالعہ کیا ہے، افغان قیادت پر مشتمل مصالحتی عمل ہی افغانستان میں امن کا ضامن ہے۔

اس موقع پر پاکستان کے وزیر خارجہ خواجہ آصف نے کہا کہ پاکستان برابری، عدم مداخلت، اقتصادی ترقی پریقین رکھتا ہے اور ہمسائیہ ممالک کے ساتھ پرامن اور برابری کی سطح پر تعلقات چاہتے ہیں۔

وزیر خارجہ نے کہا کہ افغانستان میں امن کےلیے چین انتہائی اہم کردار ادا کررہا ہے، افغانستان کے مسئلے کا کوئی فوجی حل موجود نہیں۔

خواجہ آصف نے کہا کہ پاکستان اور چین تمام علاقائی اور بین الاقوامی امور پر ایک دوسرے سے بات کرتے ہیں جب کہ پاکستان چین کی ون چائنا پالیسی کی بھرپور حمایت کرتا ہے۔

وزیر خارجہ خواجہ آصف نے کہا کہ چینی ہم منصب سے سی پیک، اقتصادی تعاون، تعلیم، عوامی سطح کے رابطوں پر بات ہوئی ہے، سی پیک چین کے صدر کا فلیگ شپ منصوبہ ہے جو باہمی رابطوں اور خطےکی ترقی کے لیے اہمیت کا حامل ہے۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *