ڈرنا منع ہے

محمد اقبال قریشی
muhammad iqbal qureshi
بلیو وہیل نامی گیم کیا ہے ، کہاں سے آئی  ، اس کے نقصات کیا ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ایک ہفتہ قبل تک میں نہیں جانتا تھا، لیکن گزشتہ ایک ہفتے سے اس کی مذمت میں اس قدر اردو بلاگز، چھوٹی بڑی پوسٹس ، حتی کہ اخبارات میں خبریں بھی شائع ہوئیں کہ اب تجسس کے ہاتھوں مجبور ہو کر میں اس گیم کے بارے میں اتنا ضرور جان چکا ہوں کہ اگر کھیلنے کا موقع ملا تو کم از کم ایک دو اسٹیجز  زندہ پار کرنے کی خواہش تو ضرور پیدا ہو چکی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ ہے ذرائع ابلاغ کا نیا اور سب سے موثر ہتھیار ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کسی چیز کو پروموٹ کرنا ہو تو اس کے حق میں ایک کروڑ کی اشتہارہ کمپین چلانے کے بجائے دس ہزار میں کسی سے بلاگ لکھوا لیں یا پندرہ ہزار کسی رپورٹر کو دے کر اسے سیڑھی بنا کر کسی اخبار میں نمایاں مقام پر خبر لگوا دیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لیکن یاد رہے یہ خبر اس شے کے خلاف یا متنازعہ انداز میں ہونی چاہیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ چند روز انتظار کیجیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ آپ کی وہ پراڈکٹ راتوں رات چن چڑھا دے گی ۔
جب میں نے بلاگنگ کی دنیا میں قدم رکھا تب میں ایک معمولی کانٹینٹ رائٹر تھا، انگلش کے ایسے آرٹیکلز تیار کرتا جن میں مخصوص Key Words بار بار اس طرح دہرائے جاتے کہ متن کا تسلسل بھی متاثر نہ ہوتا اور وہ مخصوص الفاظ بار بار قاری کی نظر کے سامنے سے بھی گزرتے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ وہ Key words تھے جو گوگل پر سب سے زیادہ سرچ ہوتے یا پھر کسی خاص پراڈکٹ کی تشہیر میں استعمال کیے جاتے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وقت گزرتا گیا اور مں نے جن کے ساتھ کام شروع کیا تھا وہ ایک چھوٹے سے ادارے کی داغ بیل ڈالنے میں کامیاب ہو گئے ، ہم نے اردو بلاگنگ کا آگاز کیا ، کی ورڈ والی تکنیک اردو مضامین میں آزمائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس کام میں محنت زیادہ تھی منافع قدرے کم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ایک دن ہمارے باس کو جو ماشاء اللہ ایک نامور بے باک صحافی ہیں خیال آیا کہ کیوں نہ فیس بک پر کوئی پیج بنا کر وہاں سے پیڈ بلاگز کا بھی سلسلہ شروع کر دیا جائے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تجویز اچھی تھی ، ہم چاروں لڑکے اور ٹیم میں شامل ایک لڑکی اس کام کے لیے تیار ہو گئے ، پہلا تجرباتی پیج کون سا تھا، یہ تو میں شاید کبھی نہ بتا سکوں لیکن اس کا مواد اس طرح نیٹ پر پھیلا کہ ہمیں اردو کی طاقت کا یقین ہونے لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہم نے ایک دو مقامی کاسمیٹکس کمپنیوں سے بات کی ، یہ لوگ اپنی پراڈکٹ کی تشہیر کے لیے ہر ماہ راسئل اور اخبارا ت پر لاکھوں روپے خرچ کرتے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہم نے انھیں تجویز دی کہ اس سے کہیں کم قیمت میں ہم ان کا ایک پیج بنائیں گے اور اس کو چند ماہ میں اتنا مشتہر کر دیں گے کہ لوگ اس کے دیوانے ہو جائیں گے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کمپنی راضی ہو گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یہاں سے ہمارے پیڈ بلاگنگ کے کام کو ایک نئی جہت ملی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہم کسی کمپنی یا پراڈکٹ کا پیج بناتے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس پر متنازعہ مواد لگاتے ، اور اپنی دوسری فیک آئی ڈزی سے اس پر جگہ جگہ ، دوسرے پیجز اور گروپس میں اتنی بحث کرتے کہ وہ چیز لوگوں کی نظروں میں آجاتی ۔۔۔۔۔۔
Image result for blue wheel game
ہمارے پیج کا لوگو والا ڈی پی ہمارے ہر کمنٹ اور لائیک کے ساتھ فیس بک پر گھومنے لگتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ قصہ مختصر اس سیزن کے الیکشن میں ہماری ٹیم کو خوب استعمال کیا گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ایک طرف سے اگر ہم ایک سیاسی پارٹی کا پیج چلا رہے ہوتے تو دوسری جانب سے اسی کمرے کے ایک کمپیوٹر پر اس کی ۢمخالف سیاسی پارٹی کا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ایک کے حق میں بیان یا پوسٹ داغتے تو کچھ ہی دیر بعد اسی کے خلاف یا تردید اور مزمت والے انداز میں مخالف پارٹی کے پیج سے کمپین چلائی جاتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نتیجہ ہم چھا گئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سیاسی پارٹیوں کو عوام سے کوئی سروکار نہیں ، یہ مجھے تب پتا چلا تھا ، جانتے بوجھتے سیاسی پارٹیوں نے ہمیں پراجیکٹس دینے شروع کیے ، کبھی کبھی تو دونوں پارٹیوں کے ٹائوٹ میرے دائیں بائیں بیٹھے  قہقہے لگا رہے ہوتے اور میں ایک پیج سے ان کے حق میں دلیلیں دے رہا ہوتا تو دوسرے پیج سے ان کو سیاسی دلا ثابت کر رہا ہوتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور یوں ہم عوام کو چ بنانے والوں کو چ بناتے بناتے راتوں رات کنگ میکر بن گئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہمارے پاس ایک ٹیر بائیٹ کی ہارڈ ڈسکس کا ڈھیر لگ گیا، سیاسی ٹائوٹ خود اپنی مخلاف پارٹیوں کا ڈیٹا ہمیں مہیا کرتے کہ اس پر بلاگ لکھو، ہم دونوں کو الگ الگ فولڈرز میں محفوظ کرتے کہ یہ سب ان کی کمزوریاں اور کرپشن کے وہ راز تھے جن کو پانے کے لیے اخباری نمائندے نہ جانے کیا کیا جتن کرتے ہیں ، لیکن یہاں یہ ہمیں یہ سب مفت میں مل رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ شاید ہم سیہ سلسلہ جاری رکھتے کہ ایک نیا چینل کھل گیا اور ہمارے باس اسلام آباد منتقل ہوگئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہماری اس غیر رسمی کمپنی کو اگرچہ انھوں نے بند نہ کیا لیکن ان کے یہاں نہ ہونے سے ہمارا کام میں دل نہ لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ایک ایک کر کے ساتھی ساتھ چھوڑ گئے ، شاہینہ کو بھی اسلام آباد میں اسی چینل کے آفس میں جاب مل گئی ، اس نے کچھ عرصہ بعد اسی چینل کے ایک اینکر سے شادی کر لی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ میں اور میرا دوست اکیلے رہ گئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ چند ماہ بعد پتا چلا کہ میرا دوست بھی آسٹریلیا جانے کے چکر میں ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ا سکی کوشش کامیاب ٹھہری اور میں اس سوشل میڈیائی جنگل میں اکیلا رہ گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ان یادوں کے سہارے جو اب میرا قیمتی اثاثہ تھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لیکن کچھ عرصہ سے یہ یادیں بچھو بن کر میرے دماغ میں کھلبلاتی رہتی ہیں ، مجھے کسی پل چین نہیں آتا، میرا ضمیر مجھے کوستا رہتا ہے
شاید ان یادوں سے چھٹکارا پانے کا ایب ایک ہی راستہ رہ گیا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جی ہاں آپ ٹھیک سمجھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ Blue Whale  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ گیم آن ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ الوداع دوستو! میرے سامنے میز پر گوشت کاٹنے والی تیز دھار چھری پڑی ہے اور مجھے اپنی بائیں ہاتھ کی چھنگلی کاٹ کر ثابت نگلنے کا ٹاسک ملا ہے !!!

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *