اسامہ کے کمپاؤنڈ سے حاصل کردہ فحش موادکہاں ہے؟

bin

سی آئی اے چیف نے اسامہ بن لادن کے قتل کے آپریشن کے دوران ان کے کمپاونڈ سے حاصل کیا گیا مواد خفیہ رکھنے کا اعلان کیا ہے۔ 2011 میں کئے گئے آپریشن کے دوران اسامہ کے ایبٹ آباد کمپاونڈ سے بہت سا فحش مواد برآمد ہوا تھا ۔ اس فحش مواد کے علاوہ باقی تمام تفصیلات ریلیز کی جا چکی ہیں لیکن غیر قانونی مواد کو ایک بار پھر ریلیز کرنے سے انکار کر دیا گیا ہے۔ سی آئی اے کے ڈائریکٹر مائیک پومپیو نے کہا تھا کہ کمپاونڈ سے ملنے والا تمام مواد میڈیا کے سامنے پیش کیا جائے گا۔ کمپاونڈ سے بہت سا الیکٹرانک دستاویزات پر مشتمل مواد القاعدہ آپریشن کی تفصیلات اور دیگر اہم رازوں پر مشتمل تھا۔ پومپیو نے فاکس نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ کوئی بھی اہم مواد جو ریلیز کرنا ممکن نہ ہو کے علاوہ باقی تمام اشیا میڈیا کے سامنے پیش کر دی جائیں گی ۔ البتہ کمپاونڈ سے حاصل کیا گیا فحش مواد کسی صورت ریلیز نہ کرنے کا اعلان کیا گیا ہے۔ پومپیو نے ایسے مواد کو کاپی رائٹ میٹیریل قرار دیتے ہوئے اسے خفیہ رکھنے کا اعلان کیا۔ فحش مواد میں بہت سی پورن فلمیں اور دوسری برہنہ تصاویر شامل تھیں۔میڈیا کی طر ف سے اپیل کی گئی تھی کہ انٹیلی جنس نے جتنا بھی مواد قبضہ میں لیا ہے اسے ریلیز کیا جائے لیکن یہ درخواست مسترد کر دی گئی۔ 2015 میں بروبائیبل نامی ویب سائٹ کو بتایا گیا کہ فیڈرل لاء کی طرف سے سی آئی اے کو فحش مواد ریلیز کرنے سے روکا گیا ہے۔ نیشنل انٹیلی جنس ڈائریکٹر جیمز کلیپر کے وکیل جیفری نے کہا تھا کہ مواد کی اہمیت کو دیکھتے ہوئے اسے کسی صورت ریلیز نہیں کیا جا سکتا۔میڈیا رپورٹس کے مطابق کمپاونڈ سے 10 موبائل فون، ایک درجن کے لگ بھگ کمپیوٹرز، 100 سی ڈیز، کچھ یو ایس بیز اور ہتھیار اور تحریری مواد قبضہ میں لیے گئے تھے۔ سینیر پینٹاگون اہلکار کے مطابق دنیا کے سب سے بڑے دہشت گرد کے قبضہ سے برآمد ہونے والا یہ مواد کسی بھی دوسرے واقعہ سے حاصل ہونے والے مواد سے کہیں زیادہ ہے۔ 9/11 حملہ کی 16ویں برسی پر اعلان کیا گیا کہ اسامہ کے بیٹے حمزہ کی تلاش جاری ہے جو بہت جلد القاعدہ کی سربراہی سنبھالنے والے ہیں۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *