درخواست برائے وزیرِ اعظم

tariq ahmedطارق احمد
دوستو جب سے عبوری حکومت کے متعلق افواہوں نے زور پکڑا ھے۔ ھمارا دوست گوگا بے قراری کے عالم میں ھے۔ بے قراری حد سے بڑھتی ھے تو دائرے میں رقص شروع کر دیتا ھے۔ کہتا ھے۔ ھر چیز دائرے میں ھے۔ رقص میں ھے۔ ھم اس کی اس دیوانگی کے متعلق کئی بار پوچھ چکے ھیں۔ نصیب دشمنان یہ طبیعت میں کیسا بھونچال ھے۔ آج گوگے کی اس جنونی کیفیت کا راز کھلا ھے۔ اس نے ایک عرضی ھمارے ھاتھ تھمائی ھے اور کہا ھے۔ آجکل ایک مناسب قسم کے وزیراعظم کی تلاش جاری ہے ۔ آپ علیک سلیک والے آدمی ھیں۔ اخبار میں لکھتے ھیں۔ میری یہ درخواست برائے وزیراعظم متعلقہ حکام تک پہنچا دیں۔ اگرچہ مقابلہ سخت ھے لیکن میرا بائیو ڈیٹا جیسا ھے۔ مجھے اپنی سلیکشن کی پوری امید ھے۔ ھمارے خیال میں گوگا اچھا خاصہ سمجھ دار شخص تھا۔ پتہ نہیں اس کی مت کیوں ماری گئی ھے۔ جو بھوٹان جیسے ملک کا وزیراعظم بننا چاہتا ھے۔ گوگا چونکہ ھمارا دوست ھے۔ اس کی درخواست فارورڈ کر رھا ھوں ۔ برائے مہربانی اسے قبول فرما کر شکریے کا موقع عطا کریں۔ درخواست حاضر ھے۔
نام۔ بغل بچہ
ولد۔ بچہ جمہورا
دادا ۔ بچہ سقہ
نوٹ۔ میرے خاندانی سلسلے میں لفظ بچے کی موجودگی معنی خیز ھے۔
تعلیم۔
بی اے ۔ مودب و پست
ایم اے ۔ لالچ اور کرپشن
پی ایچ ڈی ۔ چاپلوسی و خوشامد
ڈومیسائل ۔
پیدائشی ۔۔ لاہور
سیاسی ۔۔۔ واشنگٹن
مزھبی ۔ جدہ
بعد از موت ۔۔۔ اللہ جانے
سٹیٹس
جسمانی ۔۔۔ شادی شدہ( مزید کی آرزو ھے )
زاتی۔۔۔ ھیرو
سیاسی۔۔ زیرو
نظریاتی ۔ شاہ کا وفا دار
قدو قامت
جسمانی۔۔ چھ فٹ
روحانی ۔۔ پست
رنگ ۔۔ گرگٹ کی مانند
کھیل
سیاست، حکومت ، گالف ، خوشامد
مشغلے
قومی مفاد میں سیاستدانوں کو گالیاں نکالنا ، انہیں کرپٹ قرار دینا۔ پھر قومی مفاد میں انہی کرپٹ اور سیکیورٹی رسک سیاستدانوں سے مل کر قومی حکومت بنانا ، مقتدر حلقوں کو خوش رکھنا
ایجنڈا
قومی مفاد میں غیر ملکی مفادات کو پورا کرنا۔ مقتدر حلقوں کی انگلی پکڑ کر چلنا
پالیسی
خرید و فروخت کرو۔ تقسیم کرو حکومت کرو
ذاتی خوبیاں
طاقتور سے ڈرتا ھوں۔ کمزور پر اکڑتا ھوں۔ اوپر والوں کی خوشامد کرتا ھوں ۔ نچلے والوں سے خوشامد کرواتا ھوں۔ کمینہ اور حاصد ھوں۔ لالچ اور طمع کا شوقین ھوں۔
تجربہ
میں نے بیس سال بوٹ پالش کیے ھیں۔ پارٹ ٹائم مالشیہ ھوں۔ ملک کے بہترین مالشیے کا ریکارڈ ھولڈر ھوں۔ بوٹ پالش مناسب نہ کرنے پر خوشی سے ٹھڈے کھا لیتا ھوں ۔ کتے نہلانا اور گھوڑوں کو کھر کھرا کرنا اضافی شوق ھے۔ پانچ سال موت کے کنویں کے باھر پھٹے پر مسخرے کا رول کیا ھے۔ پانچ سال سرکس میں بندر کی کھال پہن کر ایک پہیے کی سائیکل چلائی ھے۔ منہ سے گھوڑے کی آواز نکال لیتا ھوں ۔ ماسٹر کا وفادار ھوں۔
نظریہ
آدمی کوئی چیز ھوتا ھے اور یا پھر نہیں ھوتا۔
ریفرنس
امریکہ ، سعودی عرب ، ورلڈ بینک، آئی ایم ایف ، سرکس
سفارش ۔ طارق احمد

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *