ڈی آئی خان؛ لڑکی کو برہنہ کرنے میں پی ٹی آئی وزیر کے ملوث ہونے کا انکشاف

پی ٹی آئی کے رکن قومی اسمبلی داوڑ خان نےali ameen دعویٰ کیا ہے کہ لڑکی کو برہنہ کرنے کے واقعے میں ان کی اپنی جماعت کے صوبائی وزیر علی امین گنڈا پور ملوث ہیں۔

ایکسپریس نیوز کے مطابق تحریک انصاف کے رکن قومی اسمبلی داوڑ خان کنڈی نے انکشاف کیا کہ ڈیرہ اسماعیل خان میں لڑکی کو برہنہ کرنے کے واقعے میں ان کے ساتھی اور خیبرپختون خوا میں وزیر مالیات علی امین گنڈا پور ملوث ہیں۔ داوڑ خان نے تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان، جہانگیرترین اور دیگر پارٹی رہنماؤں کو خط لکھا ہے جس میں بتایا ہے کہ علی امین گنڈا پور ڈیرہ اسماعیل خان میں جرائم پیشہ افراد کی سرپرستی کررہے ہیں اور چند روز قبل لڑکی سے زیادتی کے واقعے میں بھی صوبائی وزیر ہی ملوث ہیں جس کی میں نے خود تحقیقات کی ہیں۔

داوڑ خان نے عمران خان اور دیگر سے درخواست کی ہے کہ علی امین گنڈا پور پارٹی کا نام بدنام کررہے ہیں ان کے خلاف سخت کارروائی کی جائے اور زیادتی کا نشانہ بننے والی لڑکی کو انصاف دلایا جائے۔

ایکسپریس نیوز سے خصوصی بات کرتے ہوئے داوڑ خان کنڈی کا کہنا تھا کہ 27 اکتوبر کو ڈیرہ اسماعیل خان کے علاقے مٹ میں 16 سالہ لڑکی کو برہنہ کرکے گلیوں اور بازاروں میں گھمایا گیا تھا جس کی تحقیقات کی تو پتہ چلا کہ واقعے میں علی امین گنڈا پور ملوث ہیں، میں نے پارٹی رہنماؤں کو خط لکھا لیکن 2 روز گزرنے کے باوجود تاحال کوئی جواب نہیں آیا۔

واضح رہے کہ 27 اکتوبر کو خیبرپختون خوا کے شہر ڈیرہ اسماعیل خان میں ایک دلخراش واقعہ پیش آیا جب 16 سالہ لڑکی کو بھرے بازار میں بے لباس کیا گیا اور برہنہ حالت میں گلیوں اور بازاروں میں گھمایا گیا۔ پولیس کے مطابق 27 اکتوبر کو لڑکی کو برہنہ کرکے گھمانے کا واقعہ ذاتی دشمنی کا شاخسانہ تھا۔ پولیس نے لڑکی کی مدعیت میں مقدمہ درج کرکے 8 افراد کو گرفتار بھی کرلیا گیا ہے تاہم واقعے کا مرکزی ملزم سجاول تاحال مفرور ہے جس کی گرفتاری کے لئے چھاپے مارے جارہے ہیں۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *