یوم شفقت

Image result for kindness

پیار کون نہیں چاہتا اور کون ایسا ہو گا جو شفقت اور نرم سلوک کو پسند نہ کرتا ہو، سب کی خواپش ہو گی کہ اس سے پیار کیا جائے اس سے شفقت اور محبت سے پیش آیا جائے اور اس کو توجہ دی جائے، تو کیا صرف حق کی بات کی جانی چاہیے؟
پیار چاہنے والے پیار دینا بھی چاہتے ہیں ؟ جو شفقت اور محبت کے طلبگار ہیں کیا وہ دوسروں سے شفقت اور محبت سے بھی پیش آتے ہیں؟
پیار اس وقت ملے گا جب آپ کسی کو پیار دو گے کوئی نرم لہجے سے اس وقت بات کرے گا جب آپ کسی سے نرم لہجے میں بات کرو گے کسی کے ساتھ اگر آپ غصے سے بات کرتے ہیں تو اس بات کی امید ہی کیوں رکھتے ہیں کہ وہ آپ سے پیار سے بات کرے گا کسی کو آپ دھوکہ دیتے ہیں تو یہ کیوں چاہتے ہیں وہ آپ سے مخلص رہے، اگر کسی کے دل میں اپنے لیے پیار دیکھنا چاہتے ہیں تو اپنے دل میں جھانکو کہ تم اس سے کتنا پیار کرتے ہو پھر یقین کر لو کہ جس قدر پیار تم کرتے ہو وہ بھی اسی قدر پیار کرتا ہو گا

زندگی چار دن کی ہے اور اسے سکون محبت شفقت پیار اور خلوص سے گزارنا چاہئے اور یہ بات سب کہتے نہیں تھکتے لیکن صرف کہتے ہی کیوں ہیں خود اس بات پہ عمل پیرا کیوں نہیں ہوتے سب کی ضرورت پیار ہے تو جب تک آپ کسی کی ضرورت پوری نہیں کریں گے آپ کی ضرورت کون پوری کرے گا شفقت صرف ایک رویہ نہیں ایک امید ہے کہ جس قدر آپ کسی سے بہتر سلوک رکھیں گے آنے والا وقت آپکو اس کا صلہ اسی طرح بہتر سلوک سے دے گا اور اگر آپ نے کسی کو دھتکار کر پیش آنے کی کوشش کی تو یقین رکھیے وقت سب سے بڑا بدلہ لینے والا ہے اور وقت کی دھتکار کوئی برداشت نہیں کر سکتا

یومِ شفقت صرف ایک دن نہیں بلکہ پوری عمر ہی اس دن کو منایا جائے تو کتنا اچھا ہو گا، یومِ شفقت سے مراد شفقت کا دن ہے لیکن ہم صرف ایک دن تک ہی کیوں محدود رہیں ہماری زندگی کا ہر دن ہر دن کا ہر لمحہ ایک دوسرے سے محبت کرنے میں گزرے اور شفقت سے پیش آنے میں گزرے تو کون کسی کا دشمن ہو گا کس کے پاس نفرت کرنے کا وقت ہو گا

محبت اور شفقت اتنی بھی مشکل شے نہیں ، لوگ سمجھتے ہیں کہ شاید شفقت سے پیش آنے کے لیے ہمیں اس قدر نرم ہونا پڑے گا کہ لوگ اس نرمی کا فائدہ نہ اٹھا لیں کوئی ہماری نرمی کو کوتاہی نہ سمجھ لے کسی کو ہم بزدل نہ لگنے لگیں لیکن یہ سب باتیں ہیں اور اس قدر بے بنیاد باتیں ہیں کہ جن کی اصلیت کچھ نہیں محبت کرنے اور شفقت سے پیش آنے کے لیے پہلے کسی ریاضت یا ٹریننگ کی ضرورت نہیں ہوتی یہ تو ایک جذبہ ہے اور ایک بار محبت کر کے تو دیکھوسب نفرتیں بھول کر صرف اس محبت اور شفقت کی نرمی میں کھو جاؤ گے

ہم اپنے آپ سے محبت بھی کرتے ہیں اپنے آپ قریبی رشتوں بہن بھائیوں سے بھی محبت کرتے ہیں اور ان کے ہر معاملے میں شفقت سے بھی پیش آتے ہیں لیکن ہم عام لوگوں عام ملازموں اور دوسرے لوگوں سے شفقت سے پیش نہیں آتے صرف اس لیے کہ ان سے ہمارا کوئی قریبی رشتہ نہیں ؟ تو جان لیجیے رشتے صرف ایک گھر میں رہنے سے نہیں بنتے یہ صرف احساس سے بنتے ہیں اور احساس کسی خونی رشتے کا محتاج نہیں ہوتا، میں ْآپ کو ایک پریشان کن بات بتاتی ہوں فرض کریں جس سے آپ کئی سال سے محبت کرتے ہیں اور ہر معاملے میں صرف اس لیے شفقت سے پیش آتے ہیں کہ وہ آپ کا بہن یا بھائی ہے اور کبھی آپ کو پتہ چلے کہ وہ آپ کا سگا بہن بھائی نہیں تو پھر آپ کی محبت ڈھونگ بن کر اڑ جائے گی، اور جس سے آپ کو ہمیشہ غصے سے بات کرتے ہیں کہ وہ ملازم ہے اورکبھی آپ کو پتہ چلے کہ وہ آپ کا سگا بہن بھائی ہے تو پھر حاکمانہ طبیعت کی ساری ہوا نکل جائے گی

سو محبت اور شفقت کو صرف ایک رسمی رویہ مت بنائیے آئیے اور سب سے محبت اور شفقت کا تعلق قائم کیجیے کہ آپ کو بھی اسی شفقت اور محبت سے یاد کیا جائے جس کے آپ حق دار ہیں

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *