"آئی کیا فرنیچر" کے بانی انگوار کیمپرڈ انتقال کر گئے

8

سویڈن کے آئی کیا فرنیچر چین کے بانی انگوار کیمپرڈ ا91 سال کی عمر میں اپنے خالق حقیقی سے جا ملے۔ ان کی وفات سمالینڈ میں موجود ان کےگھر میں ہوئی۔ کمپی کے ترجمان کے مطابق کیمپرڈ 20ویں صدی کے سب سے عظیم انٹرپرینرز میں سے تھے۔ ارب پتی کیمپرڈ جو سما لینڈ میں1926 میں پیدا ہوئے تھے نے 17 سال کی عمر میں آٗئی کیا فرنیچر ی بنیاد رکھی۔ وہ ڈیلیکشیا کے مریض تھے اور انہوں نے تعلیم کے لیے اپنےو الد سے لی گئی رقم اس مقصد کےلیے استعمال کی۔ زندگی کے وسطی دور میں ان پر فاشسٹ گروپوں سے تعلقات کے الزامات بھی لگتے رہے اور انہوں نے اس کا اعتراف کرتے ہوئے اسے اپنی غلطی قرار دیا۔ کمپنی کے ترجمان نےکہا: وہ زندگی کے آخری دنوں تک کام کرتے رہے۔ انہوں نےکمپنی کے بورڈ کی ممبر شپ 87 سال کی عمر میں ختم چھوڑی۔ کمپنی ترجمان نے مزید بتایا کہ کیمپرڈ ایک محنتی اور ضدی تاجر تھے اور ان کی آنکھوں میں پیار اور مسکراہٹ ہمیشہ موجود رہتی تھی۔ ان کی کمپنی کی شہرت کی ایک بڑی وجہ ڈیزائن کی سادگی ہے۔ کیمپرڈ کو فلیٹ پیک فرنیچر کا آئیڈیا اس وقت ملا جب انہوں نے ایک ملازم کو ٹیبل کی ٹانگیں کاٹ کر اسے کار میں فٹ کرتے ہوئے دیکھا۔ فرنیچر ڈیزائنر جیف بینکس کا کہنا تھا کہ کیمپرڈ نے گھر میں استعمال ہونے والے فرنیچر کےبارے میں ایک انقلابی تبدیلی لانے کا فریضہ سر انجام دیا۔ لوگوں نے ان کی اس مہارت کو کاپی کرنے کی کوشش بھی کی لیکن ناکامی کا منہ دیکھتے رہے۔ بینکس کے مطابق جو ڈیزائن تیار اور فروخت کیے جاتے تھے وہ ری سائیکل کی جانے
والی پراڈکٹس کے اچھے استعمال کی وجہ سے مشہور تھے اور کیمپرڈ اس معاملے میں تمام لوگوں سے آگے تھے۔ کیمپرڈ ایک کنجوس شخص کے طور پر بھی مشہور تھے۔ وہ ایک پرانی والوو گاڑی چلاتے تھے اور اکانومی کلاس میں سفر کرتے تھے۔ 2016 میں ایک سویڈش ٹٰی وی کو انٹر ویو دیتے ہوئے کیمپرڈ نے کہا کہ کنجوسی ان کی فطرت کا حصہ ہے۔ سوشل میڈیا پر عوام کی بڑی تعداد نے کیمپرڈ کی وفات پر افسوس کا اظہار کیا
اور ان کی خدمات پر انہیں خراج تحسین پیش کیا۔ سویڈش وزیر خارجہ میرگاٹ والسٹرام نے ٹویٹ کے ذریعے کمیپرڈ کو خراج تحسین پیش کیا اور ان کی موت پر دکھ کا اظہار کیا۔ آئی کی کمپنی ہمیشہ سے ایک پرائیویٹ کمپنی رہی ہے اور اس کا عجیب و غریب بزنس سٹرکچر بہت سے تنازعات کا باعث بنتا رہا ۔ یہان تک کہ ایک یورپی کمیشن نے کمپنی کی ٹیکس ارینجمنٹ پر تفتیش کرنے کا بھی اعلان کیا۔ یورپین گرین پارٹی کے مطابق عجیب سٹرکچر کی وجہ سے 2009 سے 2014 کے بیچ اس کمپنی نے ٹیکس کی مد میں 1ارب یورو کی بچت کی۔ 1980 کی دہائی میں ایک انٹرویو میں کیمپرڈ نے دعوی کیا تھا کہ ان کی کمپنی صارفین کی زندگی کو آسان بنانے کے ویژن پر عمل پیرا ہے۔ کیمپرڈ پر کچھ نازی گروپوں کےساتھ تعلقات کے الزامات لگئے گئے اور تفتیش کا بھی انہیں سامنا کرنا پڑا۔ کیمپرڈ نے خود اپنی کتاب میں 1988 میں انکشاف کیا کہ وہ سویڈش فاشسٹ پیر
انگڈال کے دوست رہ چکے ہیں اور وہ اس پارٹٰ کے ممبر بھی 1942 سے 1945 تک رہے ہیں۔ انہوں نے اعتراف کیا کہ یہ چیزیں ان کے بچپن کی بیوقوفیاں اور زندگی کی بڑی غلطیاں تھیں۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *