الزامات ثابت ہوجائیں تو دو کروڑ ماہانہ دینے کے لیے تیار ہوں، عطاالحق قاسمی

ata ul haq qasmi

لاہور (خصوصی رپورٹ) معروف کالم نگار اور پاکستان ٹیلی ویژن (پی ٹی وی) کے سابق چیئرمین عطاءالحق قاسمی نے سپریم کورٹ میں جمع کرائی جانے والی معلومات کو غلط قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ اگر یہ ثابت ہو جائے کہ انہیں 1 کروڑ روپے ماہانہ تنخواہ ملتی تھی تو وہ 2 کروڑ روپے ماہانہ واپس کرنے کو تیار ہیں۔روزنامہ پاکستان سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے عطاءالحق قاسمی نے کہا کہ ان کے بطور  چیئرمین پی ٹی وی ملنے والی تنخواہ اور مراعات سے متعلق وزارت اطلاعات نے سپریم کورٹ میں جو تفصیلات جمع کرائی ہیں وہ غلط ہیں۔ وہ 15 لاکھ روپے ماہانہ تنخواہ لیتے تھے اور 5 لاکھ روپے الاﺅنس ملتا تھا لیکن وزارت اطلاعات نے مراعات میں پروگرام کے اخراجات، ان کیساتھ کام کرنے والے عملے کی تنخواہیں بھی شامل کر دی ہیں جبکہ پروگرام کے پرومو کے بل کے پیسے بھی اس میں شامل کئے گئے ہیں۔ عطاءالحق قاسمی نے کہا کہ اگر یہ ثابت ہو جائے کہ انہیں ایک کروڑ روپے مانہ تنخواہ ملتی تھی اور 2 سال میں 27 کروڑ روپے دئیے گئے تو وہ 2 کر وڑ روپے ماہانہ واپس کرنے کو تیار ہیں۔واضح رہے کہ سپریم کورٹ میں سابقچیئرمین پی ٹی وی کی تعیناتی کے ازخود نوٹس کی سماعت کے دوران وزارت اطلاعات کی جانب سے جمع کرائی جانے والی تفصیلات میں بتایا کہ عطاءالحق قاسمی کو ایک کروڑ روپے ماہانہ تنخواہ ملتی تھی جبکہ 2 سال میں 27 کروڑ روپے ادا کئے گئے-واضح رہے کہ عطاالحق قاسمی نے بطور چیئرمین پی ٹی وی جو کالم روزنامہ جنگ میں لکھے ان کا کوئی معاوضہ وصول نہیں کیا بلکہ کروڑ وں کے چیک واپس کردیے-

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *