کسی کو گاڈ فادر یا سسلین مافیا نہیں کہا، جسٹس آصف کھوسہ

اسلام آباد:  جسٹس آصف سعید کھوسہ نے پاناما کیس میں گارڈ فادر اور سیسلین مافیا کے ریمارکس پر وضاحت کر دی۔جسٹس آصف سعید کھوسہ نے ڈپٹی اٹارنی جنرل عامر رحمان کو روسٹرم پر بلا کر پوچھا آپ وفاق کے نمائندے کی حیثیت سے بتائیں ، کیا پاناما فیصلے میں کسی کو گارڈ فادر کہا گیا ؟ ڈپٹی اٹارنی جنرل نے کہا تصدیق کرتا ہوں عدالتی فیصلے میں ایسا کچھ نہیں ۔ جسٹس آصف سعید کھوسہ نے کہا کہ عدالت سمگلر، قاتل یا چور کے رکن پارلیمنٹ بننے سے متعلق پوچھتی ہے تو سمگلر اور قاتل ہٹا کر کہا جاتا ہے ، مجھے چور کہا گیا ، سیاق و سباق سے ہٹ کر چیزیں چلانا روایت بن چکی ہے۔جسٹس دوست محمد نے کہا کہ گارڈ فادر کا کردار تو ہیرو کا تھا جسے ولن بنا دیا گیا ، گارڈ فادر امیروں کو لوٹ کر غریبوں کو دیتا تھا ۔ جسٹس دوست محمد کے ریمارکس پر عدالت میں زور دار قہقہ لگا۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *