فاروق ستار کا سینیٹ الیکشن میں مشاہد حسین کی حمایت کا اعلان

اسلام آباد۔ سربراہ متحدہ قومی موومنٹ (پی آئی بی گروپ) نے سینیٹ الیکشن کے لیے ٹیکنو کریٹ نشست پر مسلم لیگ (ن) کے حمایت یافتہ امیدوار مشاہد حسین سید کی حمایت کا اعلان کیا ہے۔ ڈاکٹر فاروق ستار کی سربراہی میں ایم کیو ایم کے چار رکنی وفد نے مسلم لیگ (ن) کے وفد سے ملاقات کی جس میں سینیٹ الیکشن کے حوالے سے تبادلہ خیال کیا گیا، ملاقات کے بعد مشاہد حسین سید کے ہمراہ میڈیا سے بات کرتے ہوئے فاروق ستار نے ٹیکنو کریٹس کی مخصوص نشست پر مسلم لیگ (ن) کے امیدوار مشاہد حسین سید کی حمایت کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ سینیٹ امیدوار اسد جونیجو بھی ہم سے اچھی امید رکھیں۔ فاروق ستار کا کہنا تھا کہ ووٹ کو ووٹ ہی ہونا چاہیے، اس کے ساتھ نوٹ نہیں ہونا چاہیے، ایم کیو ایم کا اصل میدان سندھ ہے اس لیے جو بھی اراکین سندھ میں ووٹ ڈالیں انہیں پارٹی پالیسی کو مقدم رکھنا چاہیے، پالیسی سے انحراف کرنے والوں کے خلاف پارٹی آئین کے مطابق سخت تادیبی کارروائی کی جائے گی، سینیٹ الیکشن کے بعد اگر باقی جماعتیں ساتھ دیں تو قومی ایجنڈے کا اعلان کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ مشاہد حسین کی حمایت کو کوئی کسی مفاد سے تعبیر کرتے ہوئے یہ نہ کہہ دے کہ مشاہد حسین سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے دفاع و سی پیک کے رکن بھی رہے ہیں اور سی پیک انسٹی ٹیوٹ کے سربراہ بھی ہیں تو شاید فاروق ستار چین کے ویزے حاصل کرنے کے لیے ان کی حمایت کررہے ہیں، اصل بات یہ ہے کہ سی پیک ایک اہم قومی منصوبہ ہے اور ہم اس منصوبے کی حمایت کر رہے ہیں تو اس منصوبے کے لیے متحرک سینیٹ کے رکن کی حمایت کیوں نہیں کریں گے۔ فاروق ستار نے زیر لب مسکراتے ہوئے بطور مذاق کہا کہ مشاہد حسین سید آزاد امیدوار ہیں اور ہمارے امیدوار بھی شاید آزاد حیثیت سے انتخاب لڑیں، ان کی حمایت سے ہمیں بھی آسانی ہوگی اور ہوسکتا ہے کہ سینیٹر بننے کے بعد مشاہد حسین ہماری پارٹی میں ہی شمولیت اختیار کرلیں اورایک نئی ایم کیو ایم بہ نام ایم کیو ایم پاکستان مسلم لیگ (ن) چیپٹر کھول لیں اور سربراہی بھی خود ہی سنبھال لیں جیسا کہ آج کل ’’ ٹرینڈ‘‘ چل رہا ہے۔ واضح رہے کہ کل ہونے والے سینیٹ الیکشن کے لیے ایم کیو ایم کے اراکین قومی و صوبائی اسمبلی تاحال تذبذب کا شکار ہیں، سینیٹ الیکشن کے لیے خالد مقبول صدیقی اور فاروق ستار کی جانب سے جاری کیے ٹکٹ پر حصہ لینے والے امیدواروں کے کاغذات نامزدگی کو الیکشن کمیشن نے آزاد امیدوار کی حیثیت سے منظور کرلیا تھا:۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *