سیاسی رہنماں کی تصاویر والے اشتہارات کے پیسے پارٹی رہنماؤں سے لینے کا حکم

چیف جسٹس پاکستان میاں ثاقب نثارنے سیاسی رہنماں کی تصاویر والے اشتہارات کے پیسے پارٹی رہنماں سے لینے کا حکم دیا ہے۔ سپریم کورٹ میں چیف جسٹس پاکستان ثاقب نثار کی سربراہی میں تین رکنی بینچ نے سرکاری اشتہارات سے متعلق کیس کی سماعت کی۔خیبرپختونخوا کے سیکریٹری اطلاعات نے عدالت میں پیش ہوکر بتایا کہ گزشتہ تین ماہ میں 24کروڑ روپے اشتہارات پر خرچ کیے، یہ اشتہارات یکم دسمبر 2017 سے لے کر 28 فروری 2018 تک دیئے گئے، تین ماہ کے اشتہارات میں پرویز خٹک اور عمران خان کی تصاویر تلاش نہیں کرسکا۔چیف جسٹس نے سیکریٹری اطلاعات سے مکالمہ کیا کہ حکومتی اشتہارات پر 24کروڑ روپے لگادیئے، سیکریٹری نے بتایا کہ یہ اشتہارات عوامی آگاہی اور فیڈبیک کے لیے دیئے گئے۔دوران سماعت پنجاب حکومت کی جانب سے سرکاری اشتہارات سے متعلق گزشتہ تین ماہ کی رپورٹ عدالت میں جمع کرائی گئی جو ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل پنجاب نے جمع کرائی۔چیف جسٹس نے ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل سے استفسار کیا کہ اشتہارات میں سیاسی رہنمائوں کی تصاویر شامل ہیں؟ ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل نے بتایا کہ جی ہاں، اشتہارات میں سیاسی رہنمائوں کی تصاویر شامل ہیں۔اس پر جسٹس ثاقب نثار نے سوال کیا کہ ذاتی تشہیرکے پیسے کون دیگا؟ کیا آپ نے 55لاکھ روپے کا پہلے والا چیک دے دیا ہے؟ چیف جسٹس پاکستان کا کہنا تھا کہ اس معاملے کو پورا دن سنوں گا، یہ معاملہ ایک دو دن میں حل ہوجائے گا ، اس پر کام کررہے ہیں، ہم چاہتے ہیں کہ سیاسی لیڈران کی تصاویراشتہارات میں لگوانا بند کرادیں۔جسٹس ثاقب نے نثار نے حکم دیا کہ اشتہارات میں جو تصاویر لگی ہیں پارٹی رہنمائوں سے پیسے واپس کرادیں۔واضح رہے کہ چیف جسٹس پاکستان نے لیپ ٹاپ اور ہیلتھ کارڈ اسکیم پر شہبازشریف کی تصویر کا نوٹس لیا تھا اور گزشتہ روز سیاسی رہنمائوں کی تصاویر والے اشتہارات پر پابندی بھی عائد کی:۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *