ودہولڈنگ ٹیکس سے بینک ڈپازٹ پر منفی اثرات

Tax1

کراچی: بینک لین دین پر ودہولڈنگ ٹیکس کی وجہ سے بینک ڈپازٹس پر پڑنے والے اثرات زائل ہوگئے۔ بجٹ میں نان فائلرزکے بینک لین دین پر 0.6فیصد ودہولڈنگ ٹیکس عائد کیے جانے سے گزشتہ سال کے وسط میں بینکوں کو ڈپازٹ میں نمایاں کمی کا سامنا کرنا پڑا۔ اعدادوشمار کے مطابق جون 2015میں بینکوں ڈپازٹ 9141 ارب روپے تھے، جولائی سے ستمبر تک ڈپازٹس میں 120 ارب کی کمی آئی، اگست میں ڈپازٹس 9020 ارب اور ستمبر میں 9021 ارب رہے۔اس دوران تاجر برادری کے احتجاج اور حکومت کے ساتھ کامیاب مذاکرات کے بعد ودہولڈنگ کی شرح کم کرکے 0.3 فیصد کردی گئی تاہم یہ رعایت 82روز کیلیے 29فروری تک دی گئی جس کے بعد نان فائلرز کیلیے بینک لین دین پر ودہولڈنگ ٹیکس کی 0.6فیصد شرح کا ہی اطلاق ہوگا، ودہولڈنگ ٹیکس کٹوتی کی شرح کم کیے جانے سے بینکاری صارفین کا اعتماد بحال ہوا اور ستمبر کے بعد سے بینک ڈپازٹس میں بتدریج اضافہ ہوا۔ اسٹیٹ بینک کے مطابق ایک سال کے دوران بینکوں کے ڈپازٹس میں 11.16فیصد اضافہ ہوا، جنوری 2015میں بینکوں کے ڈپازٹس کی مالیت 8463 ارب روپے تھی جو ایک سال کے دوران 944 ارب روپے کے اضافے سے 9408ارب روپے کی سطح پر آگئی :-

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *