اسٹیبلشمنٹ کا ہاتھ ہوتا تو وارنٹ نہ جاری ہوتے، انیس قائم خانی

Anis Qaim

کراچی -ایم کیو ایم کے سابق رہنما انیس قائم خانی کا کہنا ہے کہ سانحہ بلدیہ کیس اور ڈاکٹرعاصم کے معاملات سے میرا کوئی تعلق نہیں جب کہ ہمارے اوپر اسٹیبلشمنٹ کے ہاتھ ہونے کا دعویٰ کرنے والے اس بات کو ثابت کریں۔ کراچی میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے انیس احمد قائم خانی نے کہا کہ جو لوگ یہ دعویٰ کررہے ہیں کہ ہمارے اوپر اسٹیبلشمنٹ کا ہاتھ ہے وہ اس بات کو ثابت کریں کیوں کہ میرے سر پر اگر اسٹیبلشمنٹ کا ہاتھ ہوتا تو میرے وارنٹ گرفتاری کیوں جاری ہوتے۔ انہوں نے کہا کہ سانحہ بلدیہ کیس اور ڈاکٹرعاصم کے معاملات سے میرا کوئی تعلق نہیں جب کہ وارنٹ گرفتاری کے حوالے سے وکیلوں سے مشاورت کے بعد تمام قانونی تقاضے پورے کریں گے اور پرامن انداز میں اپنی سیاسی جدوجہد کو جاری رکھیں گے۔ انیس قائم خانی کا کہنا تھا کہ میں ایم کیو ایم رابطہ کمیٹی کا ڈپٹی کنوینر تھا اور میری ڈاکٹرعاصم حسین سے مختلف تقاریب میں ملاقاتیں بھی ہوتی رہی ہیں لیکن کبھی کسی کارکن کے علاج کے لیے ڈاکٹر عاصم کو فون نہیں کیا، یہ معاملات ایم کیو ایم کی میڈیکل ایڈ کمیٹی دیکھتی ہے۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ میرے لاپالک بیٹے پر جو الزامات لگائے جارہے ہیں  وہ بے بنیاد ہیں :-

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *