سعودی عرب میں مزدوروں کے لئے بنائے گئے قوانین کے تحت زیرعتاب آنے والی پہلی کمپنی

news

ریاض- سعودی عرب کی وزارت محنت مزدوروں کے حقوق کے تحفظ کے لیے کئی قابل تعریف قوانین بنا چکی ہے جن میں ایک قانون یہ بھی شامل ہے کہ ملازمین کو تنخواہوں کی ادائیگی میں تاخیر کرنے والی کمپنی کو سزا دی جائے گی۔ اس قانون کے تحت پہلی کمپنی زیرعتاب آ گئی ہے۔ یہ کمپنی سعودی اوگر لمیٹڈ(Saudi Oger Ltd) ہے۔ ملازمین کو تنخواہیں ادا نہ کرنے پر وزارت محنت نے اوگر لمیٹڈ کو پاسپورٹ کے امور اور سوشل سکیورٹی سمیت دیگر سہولیات کی فراہمی معطل کر دی ہے۔عرب نیوز کی رپورٹ کے مطابق اوگر لمیٹڈ کے ملازمین کی طرف سے وزارت محنت کو شکایات درج کروائی گئی تھیں جس پر وزارت نے ایکشن لیا ہے۔وزارت نے ایک کمیٹی بھی بنائی ہے جو کمپنی کے ملازمین کی شکایات کے ازالے کے لیے کام کرے گی۔ رپورٹ کے مطابق وزارت ملازمین کو ان کے واجبات یکمشت ادا کرے گی یا قسطوں میں ادا کیے جائیں گے۔ کمپنی کے ملازمین کا کہنا ہے کہ انہیں گزشتہ 4ماہ سے تنخواہ نہیں دی گئی۔ کمپنی کا کہنا ہے کہ وہ جن منصوبوں پر کام کر رہی ہے وہاں سے اسے ادائیگی نہیں کی گئی جس کے باعث وہ ملازمین کو بھی تنخواہ ادا نہیں کر سکی۔رپورٹ کے مطابق کمپنی کے ڈائریکٹر فرید شاکر نے 10دن قبل وعدہ کیا تھا کہ وہ ایک ہفتے کے اندر ملازمین کو ایک ماہ کی تنخواہ ادا کر دیں گے لیکن وہ اس میں ناکام رہے اور انہوں نے ایک بار پھر یہ اعلان کر دیا کہ کمپنی کے پاس تنخواہیں دینے کے لیے رقم نہیں ہے:۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *