پشاور میں خواجہ سرا قتل: ہسپتال میں مردانہ یا زنانہ وارڈ کے چکر میں خوار

khawja sera diedمیڈیا رپورٹس کے مطابق علیشا کو حملے کے بعد پشاور کے لیڈی ریڈنگ ہسپتال لے جایا گیا تھا۔ خیبر پختونخوا کے خواجہ سراؤں کی تنظیم ٹرانز ایکشن الائنس (ٹی اے اے) کے فیس بک پیج پر ہسپتال میں علیشا کے ساتھ غیر ذمہ دارنہ رویے کا کئی مرتبہ ذکر کیا گیا ہے۔ اس حوالے سے لکھا گیا ہے کہ ہسپتال کے ڈاکٹر علیشا کے ساتھ آنے والے خواجہ سراؤں سے پوچھتے رہے کہ کیا وہ صرف ڈانس کرتے ہیں؟ اور وہ بطور معاوضہ کتنے پیسے لیتے ہیں۔ علاوہ ازیں لیبارٹری میں بھی علیشا کے بارے میں پوچھا گیا کہ کیا اسے ایڈز کی بیماری تو نہیں ہے۔
اسی فیس بک پیج پر ایک پوسٹ میں لکھا گیا ہے کہ علیشا کے لیے انہیں ایک الگ کمرہ لینا پڑا کیوں کہ ڈاکٹر نہ اسے مردانہ اور نہ ہی زنانہ وارڈ میں داخل کر رہے تھے۔ علیشا کے لیے الگ کمرہ لینا پڑا کیوں کہ ڈاکٹر نہ اسے مردانہ اور نہ ہی زنانہ وارڈ میں داخل کر رہے تھے۔مقامی میڈیا رپورٹس کی مطابق اس برس خیبر پختونخوا میں خواجہ سراؤں کے خلاف تشدد کا یہ پانچواں واقعہ ہے۔ عدنان، سمیر، کومل اور عائشہ کو اسی سال تشدد کا نشانہ بنایا گیا تھا۔ ان تمام کا تعلق ٹی اے اے سے ہے۔اس تنظیم اور سول سوسائٹی کے اراکین کا کہنا ہے کہ خیبر پختونخوا میں خواجہ سراؤں کو قتل، اغوا، حراساں، ریپ اور ان کی توہین کرنے کے واقعات پیش آچکے ہیں۔ خواجہ سراؤں پر دباؤ ڈالا جاتا ہے اور ان سے بھتہ بھی مانگا جاتا ہے۔اس واقعہ کے بعد سوشل میڈیا پر ہیش ٹیگ علیشا ٹرینڈ کر رہا ہے اور کئی افراد پاکستانی معاشرے میں خواجہ سراؤں کے خلاف متعصبانہ سلوک پر سوال اٹھا رہے ہیں۔

loading...

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *