یاور حیات، تجھے ہم کس پھول کا  کفن دیں

بالآخر بیمار کو بے وجہ قرار آ گیا۔۔۔ یاور حیات مر گیا۔۔۔ مجھے بھی قرار آ گیا کہ میں بہت دنوں سے اُس کی موت کا منتظر تھا۔۔۔ ٹیلی ویژن ڈرامہ کا آخری ستون بھی ڈھے گیا اور اچھا ہوا کہ اب ہم اس کے کھنڈروں میں کھڑے ہو کر…

عطا آباد جھیل میں آباد گاؤں

ہم نے سنا ہے کہ آپ ہمارے گاؤں آ رہے ہیں۔۔۔ ویران ریسٹ ہاؤس یونانی دیو مالا کا ایک ’’لوٹس آئے لینڈ‘‘ تھا۔۔۔ افیونیوں کا ایک جزیرہ تھا۔ یہاں آپ کو شمال کی بہترین روایتی خوراک ملتی تھی اور اس کے باغ بہاراں میں ملتی تھی اور ذرا سی ہوا…

ماڈل ٹاؤن پارک۔۔۔منیر نیازی اور میاں محمد بخش!

مجھے یہاں منیر نیازی یاد آنے لگا ہے، وہ ’’بیٹھے رہیں تصور جاناں کئے ہوئے‘‘۔۔۔ کی ایک عملی تصویر تھا۔۔۔ بغیر وجہ کے چلنا پھرنا گناہ سمجھتا تھا، تصور جاناں کئے ہوئے گھر میں بیٹھا رہتا تھا، اُس نے زندگی بھر مشاعرہ پڑھنے کے لئے مجبوراً اپنی نشست سے اٹھ…

عبداللہ حسین تو مسمار نہیں ہو سکتا

عبداللہ حسین کو بھٹہ چوک کے قبرستان میں دفن ہوئے ابھی ایک برس بھی نہیں گزرا۔۔۔اور یہ وہ مہان ناول نگار تھا جسے اپنی زندگی میں اپنی دراز قامت کے مطابق نہ کوئی چارپائی ملی اور نہ کوئی نقاد۔۔۔ یہاں تک کہ موت کے بعد بھی جس پلنگ پر اُس…

کھجور کاتنا روتا ہے، شجر روتے ہیں

آج سے چودہ سو برس پیشتر بھی ہم روتے تھے، گر یہ کیا تھا، فریاد کی تھی، آنسو بہائے تھے۔ صرف تمہارے انسانوں کے نہیں کل کائنات کے جتنے بھی چرند پرند اور جاندار ہیں، محمد رسول ؐاللہ سب کے پیغمبر اور پیارے ہیں۔۔۔ تو ذرا یاد کرو آج سے…

پلیز ہمیں لوٹ لیجئیے

جب کبھی اس وطن عزیز کے عزیز ہم وطن کسی عظیم فراڈ کا شکار ہوتے ہیں، اُن کے ساتھ ہاتھ ہو جاتا ہے، وہ لٹ جاتے ہیں، اُن کے ساتھ فریب وہی کی واردات ہو جاتی ہے تو میں نے کبھی فراڈ کرنے والے، لوٹنے یا فریب کرنے والے کو…

سومالیا کا نور الدین فرح اور کریم مِسکے

میں سومالیہ کے ناول نگار نورالدین فرح کے ناول ’ہائڈنگ ان پلین سائٹ‘‘ کا تذکرہ کر رہا تھا۔ یوں تو اچیبے کو افریقی ناول کا گرینڈ اولڈ مین قرار دیا جاتا ہے جس کے ناول ’’تھنگز فال اپارٹ‘‘ نے دنیا بھر میں تہلکہ مچا دیا تھا کہ یہ ناول جس…

کاملہ شمسی کا نیا ناول

بچپن میں، میں نے بھانت بھانت کے شوق پالے ہوئے تھے، ڈاک کے ٹکٹ جمع کرتا تھا، بچوں کے رسالے اور ناول پڑھتا تھا اور کبھی کبھی ان رسالوں میں پوشیدہ کر کے منٹو اور دت بھارتی کی تحریریں پڑھتا تھا، قلمی دوستی کا بھی شوق تھا بلکہ قلمی دوستی…

جہاں کبوتر اڑان نہیں کرتے

الجیریا کے ناول نگار بو عالم سنسال کا ناول ’’ہراگا‘‘ مجھے پریشان کرگیا۔۔۔ میں تو ابھی الجیریا کے یاسمین خدرا کے ناولوں کے سحر سے نہ نکلا تھا اور جانے کہاں سے یہ ایک اور جینیس نثر نگار ظاہر ہو گیا۔۔۔ سنسال کہیں کہیں تو سراماگو اور مارکیز کوبھی اپنی…

من مور ہوا متوالا۔۔۔

سب لوگ اُسے ایک فاصلے سے دیکھتے رہے، نزدیک نہ گئے کہ وہ ہراساں نہ ہو جائے اور قیافے لگاتے رہے کہ آخر گلبرگ کے اس گھنے انسانی جنگل میں ہمارے بہت مختصر سے صحن میں یہ مور کہاں سے اتر آیا۔۔۔ گھر کا ایک گیٹ مقفل تھا اُدھر سے…