’’پاکستان کی اپنی مُہر "

وزیر اعظم نواز شریف کا یہ دوسرا دور تھا‘ جب اٹل بہاری واجپائی کا ہیلی کاپٹر اقبال پارک لاہور کے سبزہ زار میں اترا۔ بھارتی وزیر اعظم نے مینارِ پاکستان پر نگاہ ڈالی اور اس کی رفعتوں کا جائزہ لینے کے لیے انہیں اپنی گردن بہت اوپر تک اٹھانا پڑی۔…

’’حجاب‘‘ ؟

یہ محض ایک تجویز تھی‘ کوئی فیصلہ نہ تھا اور اس پر عملدرآمد بھی رضا کارانہ‘ کہ اس حوالے سے کوئی پابندی نہ تھی۔ لیکن میڈیا میں وہ ہاہا کار مچی کہ خدا کی پناہ۔ جیسے آسمان ٹوٹ پڑا ہو۔ بچیوں کو حجاب کی طرف راغب کرنے کے لیے تجویز…

’’جو نہیں جانتے وفا کیا ہے

قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف سید خورشید شاہ نے یہ کہہ کر جان چھڑانے کی کوشش کی کہ حسین حقانی کی اتنی اہمیت نہیں کہ اسے ایوان میں زیر بحث لایا جائے۔ واشنگٹن پوسٹ میں شائع ہونے والے تازہ آرٹیکل کو انہوں نے پاکستان سے غداری اور امریکیوں کی…

مُکے سے انکار تک

بجا کہ پارلیمنٹ میں کی گئی تقریر کو immunity حاصل ہوتی ہے اور کسی تقریر (یا الفاظ) پر معزز رکن کے خلاف کوئی قانونی کارروائی نہیں ہو سکتی‘ لیکن معاملہ ''عزت‘‘ اور ''غیرت‘‘ کا ہو تو کیا ایوان سے نکلتے ہی ''بدتمیز‘‘ رکن کو گھونسا رسید کیا جا سکتا ہے؟…

"پھٹیچر‘‘ اور ’’ریلو کٹّے‘‘… تو ہین آمیز تو نہیں؟

خبطِ عظمت ‘ نرگسیت‘ خود پرستی کی حد کو پہنچی ہوئی خود پسندی... ہیروز میں سبھی تو نہیں ‘ البتہ بعض کسی حد تک اس عارضے سے دوچار ہو جاتے ہیں‘ لیکن ہمارے (ماضی کے) کرکٹ ہیرو میں یہ عارضہ شاید آخری حد کو پہنچ چکا ۔ ماہرین کے مطابق…

’’WELL DONE PRIME MINISTER ‘‘

احمد فراز نے کہا تھا ؎ کہاں تک تاب لائے ناتواں دل کہ صدمے اب مسلسل ہو گئے ہیں پاکستانی قوم کو فروری کے پہلے عشرے کے بعد مسلسل صدموں نے آ لیا تھا۔13 فروری کو لاہور میں چیئرنگ کراس پر دہشت گردی، تین روز بعد سیہون شریف کا سانحہ،…

ہم اسامہ بن لادن تک کیسے پہنچے؟

دہشت گردی کی جنگ کے حوالے سے پاک‘ افغان سرحد کی بات بھی ہوتی ہے‘ جس کے اُس طرف پاکستان میں دہشت گردی کرنے والوں کی تربیت گاہیں اور محفوظ پناہ گاہیں موجود ہیں۔ برادرم ابراہیم راجا نے اس اتوار اپنے کالم میں 2400کلو میٹر طویل پیچیدہ ترین سرحد پر…

’’مسالہ کچھ زیادہ ہو گیا"

یہ 1978ء کے وسط کی بات ہے۔ رامے صاحب‘ پیر پگارا کی مسلم لیگ کو خدا حافظ کہہ کر اپنی ذاتی پارٹی 'مساوات پارٹی‘ کی داغ بیل ڈال چکے تھے۔ ایک دن اپنے ایک بیان میں جماعت اسلامی اور اسلامی جمعیت طلبہ پر برس پڑے۔ تب ''آتش جواں تھا‘‘ اور…

یادداشتیں

ڈاکٹر فرید احمد پراچہ کے تازہ سفر نامے‘‘ہوائوں کے سنگ‘‘ کی تقریب رونمائی میں‘ سہیل وڑائچ نے ایک اہم نکتے کی طرف توجہ دلائی‘ اہلِ سیاست کو کتابیں پڑھنی بھی چاہئیں اور لکھنی بھی۔ مغرب میں اہلِ سیاست کا معاملہ یہی ہے‘ وہاں اہلِ صحافت بھی اس کارِ خیر میں…

دہشت گردی کی جنگ‘اپنا اپنا کام

جنرل راحیل شریف کے بعد کیادہشت گردی پھر شروع ہو رہی ہے؟ ایسا لگتا ہے جیسے ہم پھر ایک اور ''جنرل کیانی‘‘ کے رحم و کرم پر ہیں اس پر آپ کی کیا رائے ہے‘‘؟ پشاور سے موصولہ ایس ایم ایس کو دہشت گردی کے پے درپے واقعات پر عوام…