ای او بی آئی کیس: ایڈن ہاؤسنگ سوسائٹی کے اکاؤنٹس منجمد کرنے کا حکم

supreme_court_new_670x3501_converted

سپریم کورٹ نے ای او بی آئی کیس میں سی ڈی اے اور ڈی ایچ اے سے جواب طلب کر تے ہوئے ایڈن ہاؤسنگ سوسائٹی کے اکاؤنٹس منجمد کرنے کی ہدایت کی ہے اورکہا ہے کہ عدالت کو ڈی ایچ اے کی 321 کنال اراضی کی قیمت خرید اور موجودہ قیمت کا تخمینہ لگاکررپورٹ پیش کی جائے۔چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری کی سربراہی میں تین رکنی بنچ نے کیس کی سماعت کی۔عدالت کو ایف آئی اے کے ڈائریکٹر لیگل اعظم خان نے نئی رپورٹ پیش کی جس کے مطابق ڈی ایچ اے ، ای او بی آئی معاہدے میں پیپرا قواعد کی خلاف ورزیاں کی گئیں۔ای او بی آئی کے اراضی کے حصول کیلئے اکثر معاہدوں میں شفافیت نہیں تھی وزارت کی ہدایات کو نظر اندازکیا گیا اور معاہدوں سے قبل کسی اخبار میں اشتہار بھی نہیں دیا گیا،اراضی بورڈ کی منظوری کے بغیر خریدی گئی، خریداریوں میں کک بیکس لی گئیں،لینے والوں میں چیئرمین ظفر اقبال گوندل بھی شامل ہیں 20 کروڑ کی اضافی رقم لی۔چکوال اور کلر کہار میں راجہ پرویز اشرف کے داماد کے2 بھائیوں سے اراضی جس کی مارکیٹ قیمت 62ہزار فی مرلہ ہے ساڑھے 15 لاکھ فی مرلہ میں خریدی گئی جبکہ یہ اراضی متنازع بھی ہے اور اس کا ابھی تک ای او بی آئی کو قبضہ نہیں ملا، جس پر چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ کوئی چکوال میں ایک کنال کا پلاٹ 3 کروڑ 10 لاکھ روپے میں کیوں خریدے گا اتنے میں تو اسلام آباد کے سیکٹر آئی ایٹ میں کئی پلاٹ مل جاتے ہیں۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *