بے نظیرقتل کیس: پرویز مشرف کو دوبارہ پیشی کا حکم

musharaf 2

انسدادِ دہشت گردی کی خصوصی عدالت نے سابق وزیراعظم بے نظیر بھٹو  قتل کیس میں ایک بار پھر پرویز مشرف کو چھ اگست کی سماعت میں عدالت میں پیش ہونے کا حکم دیا ہے اور اس ہی دن ان پر فردِ جرم بھی عائد کی جائے گی۔

بے نظیر قتل کیس کی سماعت منگل کے روز انسداد دہشت گردی کی خصوصی عدالت  کے جج چوہدری حبیب الرحمان کی سربراہی میں ہوئی۔ جن کے سامنے پرویز مشرف پیش ہوئے تھے۔

سابق صدر کو سخت سیکیورٹی میں سب جیل سے عدالت لایاگیا تھا۔

واضح رہے کہ پرویز مشرف اس وقت پاکستان کے صدر تھے جب 27 دسمبر 2007ء میں سابق وزیراعظم بے نظیر بھٹو کو راولپنڈی کے لیاقت باغ میں جلسے سے نکلتے ہوئے فائرنگ کر کے  قتل کیا گیا تھا۔

اس موقع پر پرویز مشرف کو بے نظیر قتل کیس کے مقدمے کی نقول فراہم کی گئی جس پر انہوں دستخط کیے۔

بے نظیر قتل کیس کی سماعت کے موقع پر سابق سی پی او سعود عزیز، سابق ایس پی راول ٹاؤن خرم شہزاد بھی عدالت میں پیش ہوئے۔

دوسری جانب عدالت نے سابق صدر پرویز مشرف کی جانب سے اکاؤنٹس منجمد کیے جانے کے خلاف دائر درخواست پر فیصلہ سناتے ہوئے بینک اکاؤنٹس اور اثاثہ جات بحال کرنے کا حکم دیتے ہوئے کہا کہ مشرف بے نظیر قتل کیس میں پیش ہونے کے باعث ان کے اثاثے بحال کردیے گئے ہیں۔

یاد رہے  کہ  سابق صدر پرویز مشرف کے بینکوں میں 11 کروڑ روپے، ایک فارم ہاؤس اور گوادر میں پلاٹ ہے۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *