امام خمینی کے مزار پر فائرنگ اور خود کش دھماکے !

1

تہران ۔ ایران کی پارلیمنٹ اور امام خمینی کے مزار پر  فائرنگ اور خودکش دھماکوں کے نتیجے میں کم از کم 8 افراد ہلاک اور 35 زخمی ہوگئے ہیں، جبکہ حملوں کی ذمہ داری داعش نے قبول کرلی ہے۔

غیر ملکی خبر ایجنسیوں کے مطابق ایران کے دارالحکومت تہران میں 4 مسلح حملہ آوروں نے پارلیمنٹ میں گھس کر فائرنگ کردی جس کے نتیجے میں گارڈ سمیت 2 افراد ہلاک اور متعدد زخمی ہوگئے۔ ایرانی رکن اسمبلی نے سرکاری میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ چار مسلح افراد نے اسمبلی کی حفاظت پر تعینات گارڈ کو گولی مارنے کے بعد ارکان اسمبلی کو یرغمال بنانے کی کوشش کی۔ تاہم سیکورٹی فورسز نے جوابی کارروائی کرتے ہوئے حملہ آوروں کو گھیرے میں لے لیا۔ فائرنگ کا تبادلہ کئی گھنٹوں تک جاری رہا۔ اس دوران ایک حملہ آور نے اسمبلی کی چوتھی منزل پر اپنے آپ کو دھماکے سے اڑادیا جب کہ دیگر فائرنگ کے تبادلے میں مارے گئے۔

پارلیمنٹ پر حملے کے دوران ہی تہران کے جنوبی علاقے میں واقع آیت اللہ خمینی کے مزار پر خاتون سمیت 2 حملہ آوروں نے دھاوا بولا۔ ان میں سے ایک نے زائرین پر فائرنگ کی جبکہ خاتون نے خود کو دھماکا خیز مواد سے اڑا دیا۔ اس واقعے میں ایک شخص ہلاک اور متعدد افراد زخمی ہوئے۔ ایرانی امدادی اداروں کا کہنا ہے کہ واقعے میں 35 افراد زخمی ہوئے  جنہیں اسپتال منتقل کیا گیا، زخمیوں میں سے 2 زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے  دم توڑگئے۔ اس کے علاوہ سیکیورٹی اہلکاروں نے مزار سے ایک بم کو ناکارہ بھی بنایا ہے۔

واقعے کی ذمہ داری داعش نے قبول کرتے ہوئے کہ یہ کارروائی اس کے سپاہیوں نے انجام دی۔

واضح رہے کہ ایران میں کالعدم تنظیم جند اللہ کافی فعال ہے تاہم داعش کی جانب سے ایران میں یہ پہلی کارروائی قرار دی جارہی ہے:۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *