کٹاس راج اورآنسوئوں کاتالاب

یہ کٹاس راج ہے۔اسلام آباد سے دو گھنٹے کی مسافت پر چکوال میں واقع ایک تاریخی مقام‘ جہاں ہزاروں سال پہلے کی تاریخ سانس لے رہی ہے۔ سطحِ سمندرسے تقریباً اڑھائی ہزار فٹ بلند ‘اس جگہ پربنے ہوئے مندر اور ان سے ملحق حویلیاں دورسے ہی نظرآجاتی ہیں۔
کبھی یہ جگہ علم و فن کا مرکز تھی۔یہاںایک قدیم یونیورسٹی تھی ‘جہاں اور علوم کے علاوہ سنسکرت کی تعلیم بھی دی جاتی تھی۔کہتے ہیں کہ مشہور مسلمان ماہرِ ارضیات ‘ ریاضی‘ تاریخ اور نجوم ابو ریحان البیرونی نے کٹاس راج میں واقع اسی یونیورسٹی میں سنسکرت کی تعلیم حاصل کی تھی ۔ یہ البیرونی ہی تھا‘ جس نے کٹاس راج سے کچھ ہی دور پنڈ دادن خان کے مقام نندہ میں کئی سوسال پہلے زمین کے محیط اور قطر کی درست پیمائش کی تھی۔یہاں مندروں کے قریب ایک بدھ سٹوپا کے بھی آثار ہیں‘ جو بدھ پیروکاروں کی عقیدت کا مظہر اور بین المذاہب تعلق کا آئینہ دار ہے۔
کتنے ہی دیوانے تاریخ کے چھپے ہوئے خزانوں کی تلاش میں یہاں گھومتے رہے۔ انہیں میں ایک دیوانہ احمد حسن دانی تھا۔ وہی پروفیسر دانی‘ جس نے پاکستان کے دیگر علاقوں کے علاوہ کٹاس راج کے حوالے سے تحقیق کی۔ پروفیسردانی کے مطابق کٹاس راج کی ایک اہمیت یہ بھی تھی کہ یہاں ہندوؤں کے چار وید تحریر کئے گئے۔ کہتے ہیں‘ جب پانڈو برادران کو جلاوطن کیا گیا‘ تو انہوں نے یہیں پناہ لی اور اپنی جلاوطنی کے دن یہاں گزارے۔ میں کٹاس راج کے آسمان پر نگاہ ڈالتا ہوں اورسوچتا ہوں ‘یہی آسمان ہو گا‘ جس کے نیچے علمی محفلیں برپا ہوتی ہوں گی۔جہاں پہیلیاں بوجھنے کے مقابلے ہوتے ہوں گے۔ جہاں مختلف علوم کے مباحثے ہوتے ہوں گے۔ جہاں کی یونیورسٹی میں کتنے ہی طالبانِ علم کی پیاس بجھتی ہو گی۔ مجھے یوںلگا... کٹاس راج میں ہزاروں سال کی تاریخ سانس لے رہی ہے۔ شیومہاراج کی بارہ دری کے عین نیچے میں تالاب کی سیڑھیوں پر بیٹھا ‘ان سانسوں کومحسوس کررہاہوں ۔میں ایک بار پھر آسمان کی طرف دیکھتا ہوں۔ آسمان بادلوں سے بھرگیاہے اور تیزہوائوں کے چلنے سے یوں لگتا ہے کسی بھی وقت بارش شروع ہوجائے گی۔ نم ہوا میرے چہرے کوچھورہی ہے۔ میں آنکھیںبند کرکے صدیوں کاسفر طے کررہاہوں ۔روایت ہے کہ شیو کواپنی بیوی ستی سے بہت محبت تھی۔ دونوں کاایک دوسرے کے بغیرزندگی کاتصورمحال تھا۔ سچ ہے کہ زندگی میںمحبت کی چاشنی ہی اس کوخوبصورت بنادیتی ہے‘ لیکن یہ بھی سچ ہے کہ زندگی کے سفرمیں مسافرملتے ہیں اوربچھڑ جاتے ہیں۔ ایک روز ستی بھی شیوکوچھوڑ کرہمیشہ کے لیے اجل کی وادی میں اترگئی‘ جہاں سے لوٹ کر کوئی کبھی واپس نہیں آتا۔ اس روز شیومہاراج پر انکشاف ہوا کہ زندگی ستی کے بغیر کتنی بے معنی‘ کتنی بے رنگ ہے۔ اس روز‘ وہ اپنی بے بسی پرٹوٹ کررویا۔اس کی آنکھوں سے آنسوئوں کی قطاریں موتیوں کی لڑیوں کی صورت بہہ رہی تھیں۔کہتے ہیں آنسوئوں کی ایک لڑی اجمیر کے قریب ایک مقام پر گری‘ جہاں ایک چشمہ بن گیا۔ آنسوئوں کی دوسری لڑی کٹاس راج کے مقام پر گری‘ جہاں ایک اور چشمہ بن گیا۔یہ آنسوئوں کاچشمہ بڑھتے بڑھتے ایک تالاب بن گیا۔ اس تالاب کا رقبہ دوکنال سے زیادہ اورگہرائی تیس فٹ کے قریب ہے ۔ تالاب کے اردگرد چھوٹے بڑے مندر ہیں۔ محبت جب عقیدت میں ڈھلتی ہے ‘تو فن کے شاہکار وجود میں آتے ہیں۔ ہمیں اس دعوے پر اعتبار آجاتا ہے‘ جب ہم ان مندروں کی طرزِتعمیراور ان میں بنے خوبصورت نقش ونگار کودیکھتے ہیں۔
وسیع وعریض کٹاس راج کے گیٹ سے داخل ہوں‘ تو ایک متاثرکن منظر نگاہوں کے سامنے آتاہے۔ قدیم راستوں پر چلتے ہوئے بائیں ہاتھ بلندی کی طرف جاتا ہوا راستہ ہے‘ جس پرست گراہ کابورڈ لگا ہے۔ یہاں سات مندروں کاجھرمٹ ہے۔شیو مہاراج کے مندر کی خوبصورت عمارت کی بالائی منزل پر دریچوں سے روشنی اورہوا آتی ہے اوریہاں سے اردگرد کے منظربھی دکھائی دیتے ہیں۔ تالاب کی سڑھیوں سے اوپر بارہ دری ہے۔ بارہ دری کے دروازوں سے تالاب اورتالاب کے اس طرف شیوکا مندر صاف دکھائی دیتاہے۔
تالاب کی سڑھیوں پر بیٹھا میںچشمِ تصور میں اس امرت کنڈ(مقدس پانی کے تالاب) کو لبالب بھرا دیکھتاہوں ‘جس پردھوپ کے آئینہ کا عکس تھرک رہاہے۔ پجاریوں کی بھیڑلگی ہوئی ہے۔ لوگ اپنے گناہوں سے چھٹکارے کے لیے تالاب کے پانی میں اشنان کر رہے ہیں ۔اس مقدس تالاب کاپانی ان کے لیے آبِ شفاہے ‘جسے پی کر وہ اپنے جسم و جاں کو سیراب کر رہے ہیں۔
اچانک بادل کی گرج مجھے حقیقت کی دنیامیں لے آتی ہے۔ تاریخ کا ہزاروں سال کا سفر اچانک ختم ہو جاتا ہے اور میں لمحۂ موجود میں آجاتا ہوں۔ میرے سامنے شیوکے آنسوئوں کاتالاب ہے‘لیکن یہ وہ تالاب نہیں‘ جو میری چشمِ تصور نے دیکھا تھا‘ جو کناروں سے چھلک رہا تھا‘ جس کے پانیوں میں پجاری پوتر ہو رہے تھے۔ یہ تو ایک اور ہی تالاب ہے‘جس کا پانی خشک ہوتے ہوتے پاتال سے جا لگا ہے۔ یہ منظر بہت ہی تکلیف دہ ہے۔
کٹاس راج کا تاریخی ورثہ‘ حکومتوں کی بے حسی کی بھینٹ چڑھ گیا۔ کٹاس راج کے اردگرد سیمنٹ فیکٹریوں سے زیرِزمین پانی بتدریج کم ہوتاگیا ۔مقامی لوگوں کی شکایت کے باوجود فیکٹریاں اسی طرح ماحول پراثرانداز ہورہی ہیں۔مقامی لوگوں اور سول سوسائٹی کا احتجاج صدا بہ صحرا ثابت ہوا۔ عزت مآب چیف جسٹس آف پاکستان محترم ثاقب نثار صاحب نے اس انتہائی سنجیدہ صورتِ حال کا نوٹس لیا۔ محترم چیف جسٹس صاحب کی مسلسل کوششوں سے اب اس تالاب کوپانی دیاجارہاہے ‘لیکن یہ ان شفاف چشموں کاپانی نہیں ‘ جن میں شیوکے آنسوئوں کی مہک تھی ۔وہ چشمے‘ جنہیں سیمنٹ فیکٹریوں نے بانجھ کردیاہے‘ تالاب باہر سے لائے ہوئے پانی سے بھرتوجائے گا‘ لیکن اس میں وہ تاثیرکہاں سے آئے گی‘ جوآنسوئوں کے آبِ شفا میں تھی۔میں اپنے اردگرد گھومتے پھرتے لوگوں کودیکھتاہوں‘ جو مختلف عمارتوں کی‘ تالاب کی‘ گردوپیش کی تصویریں لے کروقت کوگرفتار کرنے کی معصوم خواہش کرتے ہیں‘ لیکن وقت توکبھی رکتا نہیں۔ انسان فانی ہیں‘ آتے اورچلے جاتے ہیں۔ وقت کا ہاتھ انسانوں کے علاوہ عمارات پربھی اثرانداز ہوتاہے‘ کٹاس راج کی عمارتوں میں خستگی کے آثار ہیں۔
اب بارش کی بوندیں آسمان سے اترنا شروع ہوگئی ہیں۔ میں تالاب کی سڑھیوں سے اٹھ کھڑا ہوتا ہوں اورایک بارپھرشیوکی بارہ دری چلاجاتا ہوں ‘جہاں میں بارش سے محفوظ ہوں‘ جہاں بارش کے نم جھونکے مجھے چھورہے ہیں‘ جہاں میں تالاب کے اُس طرف ان خوبصورت محرابوں‘ کھڑکیوں اوردریچوں کودیکھ رہا ہوں‘ بارش کی بوندوں میں سارامنظر اورحسین ہوگیاہے۔ میں بارہ دری سے نیچے اترتاہوں اور آبِ شفا والے راستے کے کنارے کنارے واپسی کے رستے پرچلنا شروع کردیتاہوں۔ گیٹ پرپہنچ کر‘میں پیچھے مڑکردیکھتاہوں ! کٹاس راج بارش میں چھپ گیا ہے ۔تیزبارش میں چلتے ہوئے دورپارکنگ میں کھڑی گاڑی تک پہنچتے پہنچتے میں ہانپنے لگتا ہوں۔میں سوچتا ہوں‘تاریخ کے آڑے ترچھے راستوں کاسفربھی کتنا تھکادینے والا سفر ہے۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *