کپتان نامہ

کیایہ مضحکہ خیز اور بھیانک نہیں کہ پریس مجھے اس قدر تنقید کا نشانہ بنانے لگا ہے جب کہ ابھی الیکشن جیتے ایک مہینہ ہی ہوا ہے ۔ انہیں معلوم ہونا چاہیے کہ  میرے تمام فیصلے اعلی درجہ کے ماہرین، نجومیوں، فال نکالنے والوں، چائے کہ پتے پڑنے والوں ، کرسٹل بال کو گھور کر دیکھنے والوں،   قابل قدر محترمہ اور دوسرے ٹیکنوکریٹس کے غور خوض کے بعد فائنل کیے جاتے ہیں۔ مثال کے طور پر آپ کو یہ معلوم تھا کہ 14 اگست کو پاکستان میں بارش نہ ہونا ایک بہت بڑی بد قسمتی کا باعث تھا؟   بارش نہ ہونے کی وجہ سے ایک بہت بڑا منفی  پہیہ رواں ہو گیا ہے؟  اس کی وجہ سے اس قدر  غلط تاثر  پیدا ہوا اور منفی صورتحال پیدا ہوئی کہ اب میں اقوام متحدہ کا جنرل اسمبلی کا اجلاس  جو ستمبر میں ہونا ہے اس میں بھی شرکت کرنے سے قاصر ہوں ۔میں شاہ محمود قریشی کو اپنی جگہ ہیلی کاپٹر پر بھیج رہا ہوں  اور آپ یہ جان کر خوش ہوں گے کہ  اسلام آباد سے نیو یار ک اور پھر واپس اسلام آباد تک یہ چکر ہمیں محض 55 روپے میں پڑے گا۔ یہ صرف کسیپر، دی فرائیڈے گوسٹ کی قربان گاہ پر میری قربانیوں کی وجہ سے ممکن ہوا ہے۔  مجھے occult کا اتنا علم ہو گیا ہے کہ میری اگلی کتاب کا نام  بھی 'Statecraft and Witchcraft' ہو گا جس کا پیش لفظ محترمہ تحریر کریں گی۔ یہ میری تیسری کتاب ہو گی  اور لوگ مجھے  ''سبزی شخصیت" کے نام سے جانیں گے۔

میری اس قدر جادوئی  کوششوں کے باوجود  کچھ لوگ ہیں کہ انہیں کسی صورت خوش نہیں کیا جا سکتا۔  میری مشکلات کے لیے کسی کے پاس ہمدردی کا ایک لفظ تک نہیں ہے۔  آپ خود سوچیں کہ صبح سویرے بیدار ہونا،  اپنے آپ کو تیار کرنا، اور کچھ عجیب و غریب لوگوں کے ساتھ میٹنگ کر نا جو کہ خود میرے ٹکٹ کے بغیر الیکشن تک نہ جیت پاتے، یہ سب کچھ کتنا مشکل اور جان جوکھوں کا کام ہے۔ اس کے بعد پھر ان لوگوں سے  ان کے ایسے نظریات، بیانات، اور  مباحث کو سننا جن سے دماغ سن ہو جائے اور پھر انہی چیزوں  کو نت نئے اندازوں سے بار بار سننا اور ان سے نمٹنا جو کہ جنوں، بدروحوں اور شیاطین  کا ہی کام ہو سکتا ہے۔ اس سب سے مجھے اس قدر سر درد ہوتا ہے کہ   مجھے ہر وقت یہ محسوس ہوتا ہے کہ میں بنی گالہ جا کر  کالی دال کے ساتھ پورے جسم پر مالش کروائوں ۔ کبھی  کبھار تو مجھے لگتا ہے کہ کیا میں نے اس سب کے لیے جو محنت کی  وہ بے کار تو ثابت نہیں ہوئی؟

 میں ہی بادشاہ ہوں

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *