ایسی ویب سائٹ جہاں ہر چیز مفت ملتی ہے، لیکن ایک شرط پر۔۔۔

مالِ مفت، دلِ بے رحم۔۔۔ یہ کہاوت تو آپ نے سنی ہی ہوگی۔ عموماً اس کا اطلاق متوسط یا غریب طبقے پر ہوتا ہے۔ لیکن کیا آپ جانتے ہیں کہ ہالی ووڈ کی اعلی ترین شخصیات بھی مفت مال بٹورنے میں کسی سے پیچھے نہیں ہیں۔ صرف یہی نہیں، ان کیلئے ایک ایسی ویب سائٹ بھی موجود ہے جو سیلیبریٹیز کیلئے مفت مسنوعات فرام کرتی ہے۔

غیر ملکی جریدے دی انڈیپینڈنٹ میں شائع رپورٹ کے مطابق آئرلینڈ سے تعلق رکھنے والی ٹی وی میزبان ووگ ولیمز نے  ایک ایسا انکشاف کیا ہے جسے جان کر آپ حسد میں مبتلا ہوجائیں گے۔

ووگ نے بتایا کہ وہ ایک ایسی ویب سائٹ کی رکن ہیں جہاں سپر اسٹار اور سلیبرٹیز کے لئے ہر چیز مفت ہے، جبکہ ان کی طرح کئی اور سلیبرٹیز بھی اس ویب سائٹ کی رکن ہیں۔

Vogue: My Sponsored Life, RTE 2, Wednesday, 9.30pm

ووگ ولیمز آج کل اپنی زندگی کے متعلق ‘ووگ : مائی اسپانسرڈ لائف’ کے نام سے ایک ڈاکیومینٹری پر کام کر رہی ہیں ۔ حال ہی میں انہوں نے لاس اینجلس کا دورہ کیا اور اس موقع پر ایک انٹرویو میں بتایا کہ یہ ویب سائٹ آن لائن شاپنگ کی طرح ہی ہے، لیکن ہمیں اس پر کوئی ادائیگی نہیں کرنی پڑتی۔

انہوں نے بتایا کہ ہم دیکھتے ہیں مختلف برانڈز نے کون سی پراڈکٹس مفت پیش کر رکھی ہیں اور بس اپنی مرضی کی چیزیں ان میں سے منتخب کرلیتے ہیں۔ یہ کمپنیاں ہم سے توقع رکھتی ہیں کہ ہم اُن کی پراڈکٹس کے لئے چند اچھے الفاظ اپنے انسٹاگرام یا دیگر سوشل میڈیا پر لکھ دیں گے۔

ان کا کہنا تھا کہ ہماری جانب سے کسی پراڈکٹ کی تعریف اُن کی پرموشن کے لئے بہت اہمیت رکھتی ہے۔

Vogue: My Sponsored Life, RTE2, Wednesday, 9.30pm

ووگ نے اس بارے میں مزید بتایا کہمیں نے اس ویب سائٹ سے آج ہی کچھ نئی بیڈشیٹس لی ہیں اور مجھے اس کے لئے کچھ بھی ادا نہیں کرنا پڑا۔ اگر یہ مجھے پسند آئیں تو میں ضرور ان کے بارے میں کچھ اچھا ہی کہوں گی۔

ووگ نے مزید کہا کہ بعض اوقات تو کمپنیاں خود ہی اپنی پراڈکٹس ہمارے گھر بھیج دیتی ہیں۔ بس وہ یہ چاہتے ہیں کہ ہم اپنے بلاگ یا سوشل میڈیا پر اُن کی پراڈکٹ کی تھوڑی سی تعریف کر دیں۔ بہت سی کمپنیاں مجھے اپنی پراڈکٹس تحفے کے طور پر بھیجتی رہتی ہیں ۔ جب مجھے کوئی پراڈکٹ اچھی لگتی ہے تو میں ضرور اس کی تعریف کرتی ہوں اور اس کی تفصیلات اپنے پرستاروں کے ساتھ شیئر کرتی ہوں۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *