’ہاں! ہم میں نسلی تعصب ہے‘، تازہ سروے میں امریکیوں کا اعتراف

racism بالعموم کسی مسئلے کے اعتراف کو اس کی بحالی کی جانب ایک قدم قرار دیا جاتا ہے۔چنانچہ اب یوں لگتا ہے کہ امریکی، جی ہاں! امریکی۔۔۔! بھی درست راہ پر چل نکلے ہیں!
نیویارک ٹائمز اور سی بی ایس نیوز کی جانب سے کروائے جانے والے ایک نئے سروے سے معلوم ہوا ہے کہ سیاہ فام اور سفید فام، ہر دو طرح کے امریکیوں میں نسلی تعلقات کے متعلق تنگ نظری بڑھ رہی ہے۔ سروے میں شامل کئے جاانے والے تقریباً 61فیصد امریکیوں نے کہا کہ امریکہ میں نسلی تعلقات’’بالعموم برے‘‘ ہوتے ہیں ۔ ۔۔ یہ تعداد گزشتہ دسمبر میں کئے جانے والے ایک ایسے ہی سروے سے تقریباً20فیصدزیادہ ہے۔ بالخصوص سفید فام امریکیوں میں، نسلی تعلقات کے منفی تاثر میں واضح اضافہ دیکھا گیا ہے۔
گزشتہ جمعرات سے اتوار تک منعقد کیا جانے والا یہ سروے، سیاہ فام فریڈی گرے کی موت کے سبب قرارداد کے حق میں مزید مبذول ہو گیا۔فریڈی گرے ، وہ سیاہ فام ہے جو بالٹی مور پولیس کی حراست میں پراسرار طور پر ہلاک ہو گیا تھا۔ گرے کی موت کے بعد کئی روز احتجاج جاری رہااور اس کے بعدمستقل طور پر موجود نسل پرستی، عدم مساوات اورامریکہ کے مسائل سے بھرپورنظام انصاف کے متعلق ایک مزید دردناک قومی گفتگو شروع ہو گئی۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *