کولکاتا سے لندن تک

" افروز عالم "

سن ۹۳۹۱ سے ۵۴۹۱ تک،دنیا ایک خطرناک راستے کا مسافر تھی، کم و بیش ایک ارب جانی اور کئی ارب کی مالی نقصان کا بار سماج کے کاندھوں پر آپڑا تھا۔ تاریخ کی کتابوں میں اس واقے کو دوسری عالمی جنگ کے نام سے موسوم کیا جاتا ہے۔ اس جنگ کے غم سے آزاد ہونے میں دنیاکو قریب قریب بیس سال لگ گئے تھے۔ یورپ کے سر سے جب جنگ کا خمار ٹوٹا تو، ترقی کے نئے نئے منصوبوں پر غور و فکر ہونے لگے۔ سن ۵۵۹۱ میں پولینڈ کی دارلحکومت وارساو کے خوشگوار فضا میں ایک اہم "دوستانہ اجلاس " طلب کیا گیا، جس کا مقصد یہ تھا کہ دنیا کے سامنے ایک ایسا ضابطہ عمل تیار کر کے پیش کیا جائے جس سے اس دنیا کے سرکاری کام کاج میں مدد ملے اور آ ئیندہ اسی کوئی سیاسی و سماجی صورت حال پیش نہ آجائے، جو بنی نو انسان کو جنگ کے ہولناک د ہانے پر لے جا کر کھڑا کر دے۔ وقت گزرتا رہا، برصغیر بھی اپنے افلاس و معاملات سے جوجھتا رہا۔ساتھ ساتھ ۵۶۹۱ میں بھارت اور پاکستان نے بھی اپنے بازو آزمائے، جس کے سبب افلاس میں اضافہ ہونا ایک فطری عمل تھا، سو ہوا۔ مرتا کیا نہ کرتا۔ پورپ نے بھی اپنی گنجائیش میں اضافہ کیا اور ہمیں بھی کہیں نہ کہیں کا رخ تو کرنا ہی تھا۔ اس لئے ۰۷ کی دہائی میں، تلاش رزق کی خاطر، آہستہ آہستہ بر صغیر کی گندومی بود و باش یورپ کی سفیدی میں شامل ہونی شروع ہوئی، رفتہ رفتہ یہ سلسلہ طویل سے طویل تر ہوتا گیا۔ اس طرح مشرقی اور مغربی ثقافت اور تہذیبوں کا اختلات بھی ہوتا گیا۔ یورپ کے کئی شہر وں میں اردو کا بول بالا بڑھنے لگا۔ لندن اردو کی تیسری بڑی بستی تسلیم کر لی گئی۔ اردو کے کئی اہم ادیب کبھی عارضی تو کبھی مستقل طور پر پرطانیہ میں آباد ہو گئے۔ فیص احمد فیص، نظر محمد راشد (ن م راشد)، ساقی فاروقی،افتخار عارف، احمد فراز، ڈاکٹر ستہ پال آنند، رضا علی عابدی، مقصود الہی شیخ، خالد یوسف، اکبر حیدر آبادی، عقیل دانش، باسط کانپوری، رفعت شمیم، باصر سلطان کاظمی، ساحر شیوی، جتندر بلو، گلشن کھنہ، سوہن راہی، نجمہ عثمان، بانو ارشد،ماہ جبیں غزل انصاری، فرخندہ رضوی، امجد مرزا، ڈاکٹر عبدلغفار عزم، مظفر احمد مظفر، پرویز مظفر اور فرزانہ فرحت، احسان شاہد چودھری، کے علاوہ کئی انگریز ادیب بھی اردو ادب کے سنہرے منظر نامے پر وارد ہوئے جس میں رالف رسل اور ڈیوڈ میتھوز کے نامے نامی بہت ہی مشہور و مقبول ہیں۔ اردو ادب کی تاریخ میں "بر طانیہ میں اردو، یا، اردو ادب" ایک طویل باب ہے، اس کو تفصیل سے رقم کرنے کے لئے، میرے انداز ے کے مطابق قریب قریب ہزار صفحات اور کم سے کم پانچ محقق کی ضرورت ہے۔ پانچ ستارہ ہوٹلوں میں منعقد ہونے والے مشاعرے سے اہل برطانیہ کو کبھی فرصت ملی تو یہ کام بھی ممکن ہوگا۔

مزکورہ بالا سطور میں میں نے ذکر کیا ہے کہ برطانیہ میں ادیبوں کی ایک کہکشاں آباد ہے، اور تھی۔ ستاروں کی اسی جھرمٹ میں ایک نام فہیم اختر کابھی ہے۔ فہیم بہت اچھے نثر نگار، افسانہ نگار، اور کالم نویس ہیں، عالمی سیمیناروں اور ادبی معاملات میں برطانیہ کی نمایندگی کرتے رہتے ہیں۔ برطانیہ میں اردو ادب کی تاریخ کے حوالے سے مورخ جب احوال رقم کریگا تو کئی صفحات پر صرف ٖ فہیم اختر نامی ستارے کی شعائیں بکھری پڑی ملے گی۔ سر دست اس مختصر مضمون میں مجھے اپنی رفاقت کے نمک کا حق ادا کرنا ہے۔ یوں تو فہیم اختر کے اجداد کا تعلق صوبہ بہار کے ضلع سیوان کے دیہی علاقے سے ہے، لیکن فہیم اختر کی پیدائیش ۱۱ جنوری ۶۶۹۱ کو مغربی بنگال کی دارلحکومت مستیوں کا شہر کلکتہ میں ہوئی تھی۔ ابتدائی تعلیم ہی کے دوران بد قسمتی سے اُن کے والد کا سایہ سر سے اُٹھ گیا تھا اور گھر کے معاشی حالات قدرے ناساز گار ہو گئے تھے۔ تاہم انہوں نے کلکتہ یونیورسٹی سے اُردو میں ایم اے کی سند حاصل کی، اس کے بعد سن ۳۹۹۱؁ء میں لندن کا رخ کیا،اور انگلستان پہنچ گئے۔ وہاں پہنچنے کے بعد لندن سے سوشل ورک میں ڈپلوما حاصل کیا۔ پھر وہیں انہوں نے شادی کر لی اور لندن میں مستقل طور سے آباد ہو گئے۔ یوں یہ تعلیمی مرحلہ بھی طے پایا اور سکونت بھی ملی ۔
لندن اور کولکاتا، ان دونوں شہر وں میں بہت سی ایکسانیت موجود ہے۔ لندن

تھیمس ندی کے ساحل پر آباد ہ ہے تو کولکاتا ہگلی ندی کے ساحل پر۔ بھارت میں جب تک برطانیہ کی حکومت رہی، ایسٹ انڈیا کمپنی کا رئیسی دفتر کو لکاتا میں رہا، یوں یہ شہر غیرا علانیہ طور پر قریب قریب ایک صدی تک بھارت کی راجدھانی بھی رہا، جب آزادی کی تحریک بیدار ہوئی تو بنگال اس کا بھی اہم مرکز بنا رہا۔ سن ۷۷۹۱ میں جب بنگال میں صوبائی انتخاب ہوا، اس میں بھارتی کمیونسٹ پارٹی کو عوام نے پسند کیا، پھر انجہانی جوتی بسو بنگال کے وزیر اعلی منتخب ہوئے، اس کے بعد بھارت میں کمیونسٹ سیاست کا اہم مرکز بھی بنگال ہی بنا۔ کئی زاویے اور حوالوں سے سن ۰۹۹۱ تک صنعت، تجارت، ادب، بنگلہ ثقافت، بنگالی فلم، فنون لطیفہ، موسیقی وغیرہ کا بھی اہم مرکز کولکاتہ ہی تھا۔ اس طرح یہ شہر ہر وقت کسی نہ کسی بہانے سرخیوں میں رہا۔ ان سارے معاملات کے اثرات اب بھی کولکا تا شہر میں دیکھنے کو ملتے ہیں۔
کولکاتا شہر کے لوگوں کے مزاج میں احتجاج کی خو خوب خوب رچی بسی ہے۔ شاید یہی وجہ ہے کہ فہیم اختر کی افسا نوی تخلیقات سے معاشرے کی نا انصافیوں کے خلاف احتجاجی جذبے کا تا ثر ملتا ہے۔فہیم اختر اپنی اوائل زندگی میں اپنے معاشرے کے جبرواستبداد سے دو چار رہے اور اپنی پڑھائی کے درمیان شہر کے سماج سدھار اداروں اور مارکسی کمیونسٹ تحریک سے وابستہ رہے۔ طلبہ جمات کی سیاست میں بھی سرگرم رہے، اور جنرل سکرٹری بھی منتخب ہوئے، اُن کے ہی تجرباتِ زندگی نے اُن کی تخلیقی تحریر کے لئے مہمیز کا کام کیا۔ اس طرح اُن کی افسانوی تخلیق کا آغاز ہوا۔ آل انڈیا ریڈیو سے اُن کے رشحات قلم براڈ کاسٹ ہوئے۔ مقامی رسائل و اخبارات میں اُن کی کہانیاں شائع ہوئیں۔ مغربی ماحول کی فکروتعلیم کی آزاد فضا اُن کی تخلیقی اقدار کی نشونما میں ممدو معاون ثابت ہوئی۔ لیکن اُن کی تحریر میں مشرقی فکروتہذیب کا جذبہِ تاثر ہمیشہ کار فرما رہا یہی وجہ ہے کہ اُن کی تخلیقی نگارشات میں سماجی نا انصافیوں کے خلاف احتجاجی جذبے کی زیریں لہر وں کو با آسانی دریافت کیا جا سکتا ہے۔ فہیم اختر آج اپنی محنت اور مطالعے کے سبب افسانہ نگار کی حیثیت سے معروف ہیں۔ اُن کے افسانے اکثر ہندوپاک کے مختلف جرائد و رسائل میں شائع ہوتے ہیں۔حال ہی میں ہندوپاک کے ایک ممتاز ادبی رسالے میں اُن کا ادبی تعارف شائع ہوا ہے۔ جس میں اُنھوں نے بڑی فراخ دلی سے جتیندر بلّو، مقصود الہی شیخ،فاروق حیدر،باسط کانپوری،ڈاکٹر جمال سوری،ڈاکٹر شکیل احمد خان اور رفعت شمیم جیسی جید ادیبوں کا حوالہ دیا ہے۔ ان ہی حضرات نے ان کی افسانوی کاوشوں کی حوصلہ افزائی کی ہے۔ اپنی افسانوی تخلیق سے متعلق فہیم اختر کا اپنا ذاتی تجزیہ قابل ذکر ہے۔
" مجھے فخر ہے کہ میری کہانیوں کو سماج کی پسماندہ مزدور پیشہ غریب عوام سراہتی ہے‘۔ میری تحریر سے اُن کو اپنی زندگی کے حقائق کا سراغ ملتا ہے"۔ کتّے کی موت، دیو داسی،رکشہ والا،وندے ماترم،ایک گریزاں لمحہ،خواب کا ایک انجانا رشتہ،پیاسی ندیاں، رشتوں کا درد،بیوٹی پارلر، لال کرُسی،کالی پتلون اور نادان،اُن کے یہ تحریر کردہ افسانے ادب میں اپنی ایک حیثیت کا تقاضا کرتے ہیں۔ اُن کا اولین افسانوی مجموعہ ’ایک گریزاں لمحہ‘ سن ۴۱۰۲؁ء میں شائع ہو ا تھا۔ سن ۵۱ ۰۲میں محترم فہیم اختر سے جب میری ملاقات اسطنبول یونیورسیٹی (ترکی) کے ایک سیمینار میں ہوئی تھی اس موقے پر یہ افسانوی مجموعہ بطور تحفہ انہوں نے مجھے دیا تھا۔ چونکہ میں افسانے کا Hardcore ناقد نہیں ہوں، اور ہلکی فلکی بات آپ پسند نہیں فرمائیں گے، اس لئے میں ان افسانوں کا لطف تو لے سکتا ہوں، لیکن میری اپنی کوئی رائے اس معاملے میں زیادہ اہمیت نہیں رکھتی ہے۔ تاہم شہرہ آفاق ادیب و ناقد محترم شمس الرحمٰن فاروقی نے فہیم اختر کے افسانے کے متعلق لکھا ہے کہ ’غیر مقیم ہندوستانی ادیبوں کی طرح فہیم اختر نے صرف غیر مقیم ہندوستانیوں کے مسائل کو اپنا موضوع نہیں بنایا ہے۔ وہ انسانی زندگی کے مسائل کو براہ ِ راست بھی برت سکتے ہیں بعض جگہ جذبات غالب آجاتی ہے(مثلاً’دیو داسی‘)تو بعض جگہ انسانی پہلو زیادہ نمایاں ہوجاتا ہے"۔

فہیم اختر نفیس طبیعت کے مالک ہیں، گفتگو سے تعلیمی لیاقت کا اندازہ لگایا جا سکتا ہے۔ دیر رات تک مطالع میں گم رہتے ہیں، ہر ہفتہ ایک کالم لکھنے کے لئے بھی دنیا بھر کے معاملات اور واقعات پر نگاہ رکھنی پڑتی ہے۔ یہ ان کا شوق بھی ہے اور ان کی مجبوری بھی، اسی شوق اور مجبوری کے بطن

سے مواد جمع ہوتے ہیں جو ہمارے اور آپ کے لئے فرحت کا سامان بنتے ہیں۔ فہیم اختر نے سن ۳۱۰۲؁ء سے کالم لکھنا شروع کیا، "لندن کی ڈایری" کے عنوان سے یہ کالم بیک وقت کو لکاتا کے روزنامہ اخبارِ مشرق، نا روے کی ویب سائٹ کارواں اور لاہور کے روزنامہ دُنیا، دہلی کی ویب سائٹ صدا ٹوڈے کے علاوہ اور بھی کئی اخبارات و ویب سایٹ میں ہر ہفتے شائع ہورہے ہیں۔ انہیں کالموں کو ایک جا کر کے کو لکاتا کے ادیب محترم ڈاکٹرشکیل احمد خان نے ۸۱۰۲ میں "لندن کی ڈایری" کے نام سے ایک ضخیم کتاب شائع کیا ہے۔ کتاب کا پیش لفظ جواہر لال یونیورسیٹی، دہلی کے فاضل پروفیسر خواجہ محمد اکرام الدین نے تحریر کیا ہے، جبکہ ڈاکٹرشکیل احمد خان نے مقدمہ کے عنوان سے ۴۵ صفحات پر بہت ہی طویل اور تفصیل سے گفتگو کیا ہے۔
" لندن کی ڈایری" اخباری کالم کا مجموعہ ہے، اخباری کالم کی اپنی حدیں اور مجبوریاں ہوتی ہیں۔ یہ حدیں اور مجبوریاں ہر ایک کالم میں محسوس کیا جا سکتا ہے۔ اکثر کالم پڑھنے پر تشنگی کا احساس دامن کو تھام لیتے ہیں، دل چاہتا ہے کی اس موضوع پر تھوڑی اور گفتگو ہونی چاہیئے۔ مجھے کبھی لندن میں قیام کا اتفاق نہیں ہوا، سچ پوچھئے تو ہگلی ندی کے ساحل کا مشاہدہ بھی میں نے اس طرح نہیں کیا ہے جس طرح ایک کلکتیہ بنگالی کر سکتا ہے، اس لئے فہیم اختر کی تحریر سے ان کے مجاز اور تھیمس اور ہگلی کے ساحل کی فضا کا اندازہ لگا نے کی کوشش کرتا ہوں۔ آپ کچھ دیر اور میرے ساتھ رہیئے:۔ "لندن کی ایک سہانی شام، ٹاور برج کے سامنے دریائے تھیمس کی لہروں پر شفق کے عکس نے ماضی کے دریجوں کو کرید دیا تھا۔ ایسالگ رہا تھا کہ یہ کل کی بات ہے جب تین دہائی قبل ہگلی ندی کی لہروں میں اسی طرح کا عکس دیکھنے کے لئے میں اکثر وہاں پر موجود رہتا تھا اور آج تمام مناظر پھر سے ترو تازہ ہو گئے۔ کلکتہ کی یاد ستانے لگی۔ کلکتہ کو لندن کی طرح دیکھنے کے ارمان دریائے تھیمس کی لہروں کی طرح مچلنے لگے۔ کاش میں بھی کچھ تعاون کر سکوں۔ فورا یہ خیال آیا کہ شہرصرف کنکریٹ اور فلک بوس عمارتوں کا ہی مجموعہ نہیں بلکہ ان عمارتوں کے مکیں کی تہذیب و تمدن، روایت و ثقافت کے عنصر سے شہر معطر ریتا ہے۔ اسی خیا ل نے مجھے " لندن کی ڈایری " لکھنے پر مجبور کیا " (لندن کی ڈایری)
لندن آج سے سو سال قبل ہی برقی قمقموں کی روشنی میں نہایا ہوا شہر تھا، اس شہر سے مطالق بے شمار قصے سینا بہ سینا اور ورق بہ ورق زندہ ہیں۔ یہ بہت ممکن تھا کہ ایک تار کین وطن اس شہر کی رنگینیوں میں اس طرح کھو جائے جیسے ساحر لدھیانوی نے زلفوں میں چھپ کے جینے کی بات کی تھی۔ لیکن فہیم اختر جیسے حسساس اور ذہیں شخص کو یہ گوارا نہ تھا۔ انہیوں نے اپنی ثقافت کی آبیاری کو ترجیح دیتے ہوئے، اپنی قابلیت کی بدولت اچھے و عہدے پر مسلسل فائز بھی ہیں۔ فہیم اختر آج لندن اور کولکاتا کے کئی فلاحی اداروں سے بھی وابسطہ ہیں، جہاں سے ضرورت مند اور نادار بچوں کی تعلیم کے لئے خطیر رقوم سے امداد بھی کی جاتی ہے جبکہ لائیق طلبہ کو انعام و اکرام سے بھی نوازہ جاتا ہے۔ صوفی جمیل اختر لٹرری سوسائٹی (کولکاتا) کے زیر اہتمام ہر سال صوفی جمیل اختر میموریل ایوارڈ کا سلسلہ بھی پچھلے کئی سالوں سے جاری ہے۔ یہ ایوارڈ معروف ناقد شمس الرحمان فاروقی، شہرہ آفاق شاعر و ناظم مشاعرہ پروفیسر ملک زادہ منظور احمد، قابل احترام مزاح نگار مجتبی حسین، مشہور صحافی عزیز برنی، قابل احترام صحافی احمد سعید ملیح آبادی، جواہر لال یونیورسیٹی (دہلی) کے پروفیسر خواجہ محمد اکرام، ا لاظہر یونیواسیٹی (مصر) کے صدر شعبہ اردو پروفیسر یوسف عامر، اسطنبول یونیواسیٹی (ترکی) کے صدر شعبہ اردو پروفیسر خلیل طو ق آر، اخبار مشرق کے مینیجگ اڈیٹر وسیم الحق، کو پیش کیا گیا ہے۔ میں ذاتی طور پر دعا گو ہوں کی اللہ رب لعزت بھائی فہیم اختر کو صحت کی سلامتی اور قلم میں روانی اور حرارت دے۔

 

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *