فردوس جمال بمقابلہ ماہرہ خان: پاکستان میں خواتین کی عمر آخر اتنا بڑا ’مسئلہ‘ کیوں ہے؟

پاکستانی فلم انڈسٹری کے سینئر اداکار فردوس جمال نے چند روز قبل ایک ٹی وی شو کے دوران اداکارہ ماہرہ خان کے بارے میں کہا کہ ماہرہ کی عمر زیادہ ہو گئی ہے اور انھیں اب ہیروئین کے نہیں بلکہ ماں کے کردار ادا کرنے چاہیئیں۔

فردوس جمال کے اس بیان نے پاکستان کی شوبز انڈسٹری اور سوشل میڈیا پر ایک طوفان برپا کر دیا اور بہت سے لوگوں نے فردوس جمال کے اس بیان کی شدید مذمت کی۔

پاکستانی فلم ساز مومنہ درید جن کی نئی فلم ’سپر سٹار‘ میں ماہرہ خان مرکزی کردار ادا کر رہی ہیں، نے تو مستقبل میں فردوس جمال کے ساتھ کام کرنے سے ہی انکار کر دیا۔ جس کے بعد سوشل میڈیا پر مومنہ کو بھی برا بھلا کہا جا رہا ہے۔

اسی معاملے پر ماڈل نادیہ حسین نے بھی ٹویٹ کی کہ عمر کا مسئلہ صرف خواتین اداکاروں کے ساتھ ہی کیوں ہے؟

انھوں نے لکھا کہ جب 30 سال سے زائد عمر کا مرد ہیرو کا کردار ادا کرتا ہے تو اس پر کوئی بات نہیں کرتا۔ وہ آخر باپ کا کردار کیوں ادا نہیں کرتا؟ یہ دوہرے معیار ہیں۔

تاہم ماہرہ خان نے فردوس جمال کی اس تنقید کا انتہائی دھیمے انداز میں جواب دیا۔

اپنے انسٹاگرام اکاؤنٹ پر کسی کو مخاطب کیے بغیر انھوں نے لکھا: ’یہ دنیا نفرت سے بھرپور ہے لیکن ہمیں محبت کا انتخاب کرنا چاہیے۔ ہمیں لوگوں کی رائے کو برداشت کرنا چاہیے۔ ہماری جنگ اس مخصوص سوچ کے خلاف ہونی چاہیے جو یہ سمجھتے ہیں کہ کامیاب عورت ایک ڈراؤنی سوچ ہے لیکن ایسا بالکل نہیں ہے۔‘

ماہرہ خان

انھوں نے یہ بھی لکھا کہ وہ اُن سب کا شکریہ ادا کرتی ہوں جو ان سے پوچھے بغیر ان کی حمایت میں باہر آئے۔

ڈاکٹر اعجاز وارث نے ماہرہ خان کے حق میں ٹویٹ کرتے ہوئے لکھا: ’کسی کے کچھ کہنے سے سپر سٹارز کو کوئی فرق نہیں پڑتا۔ ماہرہ خان آپ ایک سپر

سٹار ہیں جو راج کرنے کے لیے پیدا ہوئی ہیں۔‘

مسالہ میگزین کی ڈیجیٹل ایڈیٹر مہوش اعجاز نے لکھا کہ ’انڈسٹری کے اندر سے ماہرہ خان پر تنقید دیکھ کر انھیں بہت افسوس ہو رہا ہے جبکہ ان سب کو پتہ ہے کہ سسٹم کیسے کام کرتا ہے۔’

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *