وزیر داخلہ نے انتخابی عمل کی جانچ سپریم کورٹ سے کرانے کی پیشکش کر دی

Nisarوفاقی وزیرِ داخلہ چوہدری نثار علی خان نے کہا ہے کہ پورے ملک میں ہونے والے انتخابی عمل کے نتائج کو سپریم کورٹ لے جانے کی پیشکش کرتے ہوئے ووٹوں کو دوبارہ گنتی کی بھی پیشکش کی ہے۔

انہوں نے انتخابات میں دھاندلی کے الزامات کو مسترد کردیا۔

وہ قومی اسمبلی میں مختلف مسائل پر حکومتی مؤقف واضح کررہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت جو کرسکتی ہے وہ کررہی ہے۔

انتخابات کے حوالے سے انہوں نے کہا کہ انتخابات میں مقناطیسی سیاہی استعمال نہیں کی جس کی ذمے داری الیکشن کمیشن پر عائد ہوتی ہے لیکن وہ ووٹوں کی گنتی کا معاملہ جسٹس وجیہہ الدین کے حوالے کرنے کو تیار ہیں۔

انہوں نے کہا کہ الیکشن کمیشن کیلئے اکثر نام پیپلز پارٹی نے دیئے تھے۔

سانحہ راولپنڈی کا ذکر کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اس واقعے کے متاثرین کے تمام نقصانات پورے کئے جائیں گے جبکہ پولیس افسران کیخلاف کارروائی ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ واقعے میں جو ملوث افراد گرفتار ہوئے ہیں انہیں ایک دو دن میں عوام کے سامنے پیش کردیا جائے گا۔

چوہدری نثار علی خان نے کہا کہ راولپنڈی میں فرقہ واریت کے واقعے کی رپورٹ نہیں تھی۔

لاپتہ افراد کے معاملے پر بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اپنی ذمے داریاں سنبھالتے ہیں انہوں نے لاپتہ افراد پر کام شروع کردیا تھا۔

چوہدری نثار نے کہا کہ لاپتہ افراد کا فوج کی تحویل میں ہونے کا تاثر درست نہیں اور تمام لاپتہ افراد صوبہ خیبرپختونخواہ میں رکھے گئے ہیں۔

انہوں نے امن و امان کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ طالبان کے امیر بیت اللہ محسود کے قتل کے بعد پورا پاکستان طالبان کے نشانے پر ہے۔

جمعرات کو قومی اسمبلی میں ارکان کے نکتہ ہائے اعتراضات کے جواب میں وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان نے کہا کہ عمر کوٹ اور سندھ کے دیگر حصوں میں اقلیتوں کے تحفظ کیلئے وفاقی حکومت اپنے بھرپور اختیارات استعمال کرے گی۔

انہوں نے کہا کہ الیکشن کمیشن اور سپریم کورٹ ہمارے دائرہ کار میں نہیں آتے ہم اب بھی چالیس حلقوں میں انگوٹھے کے نشانوں کی تصدیق کیلئے تیار ہیں۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *