16دسمبر اور ہماری چھٹی

M. Rafiullahآج 16 دسمبر ہے۔ افسوس کہ آج اسکول و کالج بند ہیں۔ تمام صوبائی حکومتوں نے اپنا فرض منصبی سمجھتے ہوئے آج 16 دسمبر کو ’آرمی پبلک اسکول‘ کے بچوں کی یاد میں تمام تعلیمی ادارے بند رکھنے کا نوٹیفیکیشن جاری کیا ہے۔ جب کہ آئی ایس پی آر نے آرمی پبلک اسکول کے شہید بچوں کی پہلی برسی پہ اک گیت جاری کیا ہے جس کے بول یہ ہیں
مجھے ماں اس سے بدلہ لینے جانا ہے
مجھے دشمن کے بچوں کو پڑھانا ہے۔
اس گیت میں بچوں کے انتقام کا ذکر ہے اور انتقام دشمن کے بچوں کو پڑھا کر، انہیں تربیت دے کر لینا ہے۔ اس گیت کی خوبصورت بات یہ ہے کہ پڑھائی اور تربیت کی اہمیت کو اجاگر کیا گیا ہے۔
آئی ایس پی آر کے اس گیت نے اک نئی سمئت دکھائی ہے، قوم کے زخموں پہ مرہم رکھا ہے۔ گیت سنتے ہی آنکھیں نم ہو جاتیں ہیں اور سننے والے کے اندر اک نیا جوش و جذبہ پیدا ہوتا ہے۔ اس گیت کی موسیقی، شاعری اور آواز سے خوف کے منڈلاتے ہوتے سائے چھٹتے ہوئے محسوس ہوتے ہیں۔ سچ میں شاعر میجر عمران نے دل موہ لئے ہیں۔
کاش کہ آج تمام اسکول و کالج کھلے ہوتے اور ان میں شہدا بچوں کی یاد میں مختلف نوعیت کی تقریبات ہوتیں جن میں اس گیت کی طرح زندہ بچوں کے لیئے اک مثبت پیغام ہوتا جنہوں نے کل اس ملک کی باگ ڈور سنبھالنی ہے۔
پتا نہیں کہ حکومتوں کو کیا دور کی سوجھی جو اپنے ہی تعلیمی ادارے بند کر کے دہرا نقصان کر دیا۔ ایک تو اپنے بچوں کی تعلیم کا ہرج کیا اور دوسری طرف ان لوگوں کی حوصلہ افزائی کی جو ہمیں اور ہماری نسل کو گمراہ کرنا چاہتے ہیں۔ جو چاہتے ہیں کہ ہمارے تعلیمی دارے بند رہیں اور ہم ان جاہلوں کی طرح انکی تقلید کریں اور دین و دنیا تباہ کریں۔
حد تو یہ ہے کہ کل صوبائی حکومتوں نے چھٹی کا نوٹیفیکیشن جاری کیا ہے اور آج وزیراعظم صاحب نے اسکولوں کو ’اے پی ایم ایس‘ کی یاد میں تقریبات منعقد کرنے کا کہا ہے۔ افسوس یہ بھی ہے کہ ملکی سطح پہ کوئی ہم آہنگی دکھائی نہیں دیتی۔ ہم ہر کام عجلت میں کر جاتے ہیں، اس لئے وہ بے اثر رہتے ہیں۔
کہیں ایسا تو نہیں ہے کہ حکومت وقت نے یہ تاثر لیا ہو کہ صرف دشمن کے بچوں کوہی پڑھانا ہے، اپنے نہ بھی پڑھیں تو خیر ہے۔
اک طرف تو حکومت مفکر پاکستان، ڈاکٹر علامہ اقبال کی سالانہ چھٹی یہ کہہ کر ختم کردیتی ہے کہ اس چھٹی سے اربوں روپے کا نقصان ہوتا ہے اور دوسری طرف تعلیم کا نقصان، انہیں نقصان دکھائی نہیں دیتا۔
اس وقت قوم کو ایکے کی ضرورت ہے، نئے جوش اور ولولے کی۔ سب سے زیادہ تعلیم و تربیت سے سوچ بدلنے کی اشد ضرورت ہے۔ قوم کے ساتھ ساتھ سب سے زیادہ تربیت کی ضرورت ہمارے سیاسی اور مفاد پرست لوگوں کو ہے جنہیں یہ نہیں معلوم ہوتا کہ کونسا کام کب کرنا ہے۔ بات اور کام وقت کے مناسبت سے ہی ہونے چاہیئں۔ آج آرمی پبلک اسکول کھلے ہیں اور یکجہتی کا اظہار کرنے والوں کے اسکول بند ہیں۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *