شاکر علی فن مصوری میں ایک قدآور شخصیت تھے ، 100ویں سالگرہ پر مقررین کا اظہارخیال

Renowned Artist Nayyar Ali Dada and others sitting on the stage to pay tribute to Shakir Ali at his 100th birthday at Shakir Ali Museum Lahore on March 6, 2016

لاہور(نمائندہ دنیا پاکستان) شاکر علی فن مصوری میں ایک قدآور شخصیت تھے جنہوں نے اس فن میں نئے موضوعات کو متعارف کروایا ۔ قومی کلچر کے فروغ کے لیے شاکر علی نے بہت کام کیا ۔ موجودہ دور کے آرٹ کے شعبہ سے تعلق رکھنے والے طلباو طالبات ان کی شخصیت اور فن کا مطالعہ کر کے بہت کچھ سیکھ سکتے ہیں ۔ شاکر علی استادوں کے استاد تھے جنہوں نے مشکل حا لات میں مصوری کے کام کو آگے بڑھایا۔ ضرورت اس امر کی ہے کہ ان کے کام اور معاملات جو ان سے منسوب ہیں انہیں آگے بڑھایا جائے ۔ دہشتگردی کے خاتمہ اور امن و امان کی صورت حال پر قابو پانے کے لیے شاعری ،ادب اور مصوری کے فن کو آگے بڑھانے کی ضرورت ہے ۔ شاکر علی ہمارا قومی اثاثہ ، عظیم فن کار اور نامور شخصیت تھے آج کے دن کے حوالہ سے انہیں جتنا بھی خراج عقیدت پیش کیا جائے کم ہے ۔ان خیالات کا اظہار معروف مصور نیئر علی دادا نے شاکر علی میوزیم میں شاکر علی کی سوویں سالگرہ کے حوالہ سے منعقدہ تقریب سے خطاب میں کیا ۔ تقریب میں جاوید اقبال کارٹونسٹ ، پروفیسر بشیر احمد ، مسعود کوہاری ، میاں اعجاز الحسن ، آمنہ اسماعیل پٹودی ، اقبال جعفری ، ناہید فخر، صلاح الدین مرچو، نازش عطا اللہ ودیگر فن کاروں نے معروف مصور شاکر علی کو بہترین الفاظ میں خراج تحسین پیش کرتے ہوئے ان کے فن کو آج کی نوجوان نسل میں زیادہ سے زیادہ متعارف کرانے کی ضرورت پر زور دیا۔ شاکر علی کے فن اور ان کی شخصیت کے بارے میں ڈاکو مینٹری فلم بھی دیکھائی گئی ۔ اس موقعہ پر شاکر علی کی سوویں سالگرہ کا کیک بھی کاٹا گیا ۔ تقریب سے خطاب کرتے ہوے ڈائر یکٹرشاکر علی میوزیم آمنہ اسماعیل پٹودی نے کہا کہ شاکر علی کے فن کو اجاگر کرنے کے لیے ان کی سوویں سا لگرہ کے حوالہ سے پورا سال تقریبات منعقد کی جائیں گی ۔تقریب میں فن مصوری سے تعلق رکھنے والی شخصیات اور بڑی تعداد میں طلبہ و طالبات نے شرکت کی ۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *