افغانستان میں موجود امریکی جنگی سامان پاکستان کو ملنے کا امکان، امریکی اخبار

afghanistan-us-arsenal-ap-543افغانستان میں موجود 7ارب ڈالر مالیت کا امریکی جنگی سامان پاکستان کو بلا معاوضہ ملنے کا امکان ہے، ایک امریکی اخبار نے کہا ہے کہ امریکا کی پوری کوشش ہے کہ افغانستان سے اس کی فوج کے انخلا سے قبل یہ تمام سامان اپنے کسی اتحادی ملک کے حوالے کردے، اس معاملے پر پاکستان سے بات چیت پہلے ہی شروع ہوچکی ہے، افغانستان میں موجود اس امریکی سامان میں بارودی دھماکے سے محفوظ رہنے والی جدید بکتربند گاڑیوں سمیت مختلف اقسام کے جنگی آلات بھی شامل ہیں، چونکہ اس سامان کو امریکا واپس لے جانے پر کثیر اخراجات کرنے پڑیں گے اس لئے محکمہ دفاع اسے واپس لے جانے میں کوئی دلچسپی نہیں رکھتا، یہ سب کچھ افغانستان کی مقامی فوج کو دینے کی تجویز بھی مسترد کی جاچکی ہے کیونکہ امریکی جنرلوں کو یقین نہیں کہ افغان فوج اس سامان کو عسکریت پسندوں کے قبضے میں جانے سے روکنے کی موثر صلاحیت رکھتی ہے، یہ معاملہ امریکی محکمہ دفاع پینٹاگان کے زیر غور ہے اور اس پر حتمی فیصلہ جلد متوقع ہے،افغانستان میں تعینات اتحادی افواج کے کمانڈر جنرل جوزف ڈؑنفورڈ نے بتایا کہ جس ملک کو بھی یہ سامان دیا جائے گا وہ اسے اپنے خرچ پر افغانستان سے لے جائے گا،کئی دوست ممالک اس نتیجے پر پہنچے ہیں کہ ان کیلئے اس جنگی سامان کو اپنے ملک لے جانا مالی طور پر سود مند نہیں ہوگا،چونکہ افغانستان اور پاکستان کے درمیان 1500میل طویل سرحد ہے اس لئے پاکستان کیلئے اس سامان کو لے جانا دشوار نہیں ہوگا، پینٹاگان ذرائع کے مطابق پاکستان کی جانب سے اظہار دلچسپی کا ایک بڑا سبب اس جنگی سامان میں شامل بارودی دھماکے سے متاثر نہ ہونے والی 1600بکتر بند گاڑیاں (MRAP) ہیں، اس لئے کہ دہشت گردوں کی جانب سے سڑک کے کنارے نصب بموں کا شکار ہوکر پاکستان کے سینئر افسران سمیت لاتعداد فوجی جاں بحق ہوچکے ہیں۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *