مشرف ڈرامہ

Ayeshaڈاکٹر عائشہ صدیقہ

آج کل جنرل مشرف کے کیس حوالے سے ملک میں ایک ہنگامہ سا بپا ہے جبکہ کچھ لوگ اس کیس کو پاکستان میں سول ملٹری تعلقات کے حوالے سے ایک اہم سنگِ میل قرار دے رہے ہیں کیونکہ اس سے پہلے یہ کبھی دیکھنے میں نہیں آیا کہ ایک آرمی چیف کو کسی جمہوری حکومت کا تختہ الٹنے کی پاداش میں مقدمے کا سامنا کرنا پڑاہو۔ تاہم اس شور میں ایسی آواز خال خال ہی سنائی دیتی ہے جو اس کیس کے نتیجہ خیز ہونے کے حوالے سے کوئی دلیل پیش کررہی ہو۔کہا جارہا ہے کہ ایک جمہوری حکومت کو نواز شریف کی انا کی بھینٹ نہیں چڑھنا چاہیے۔ کچھ ماہرین ماضی میں نواز شریف کے فوج کے ساتھ کشیدہ تعلقات کی تاریخ کویاد کرتے ہوئے کہہ رہے ہیں کہ وزیرِ اعظم کو اس راہ پر چلنے سے احتراز کرنا چاہیے جو جی ایچ کیو کے اشتعال کا باعث بنے۔نئے آرمی چیف، جو اب تک ایک مختلف قسم کے فوجی افسر دکھائی دیتے تھے، کے تازہ بیان کے مطابق سیاسی حکومت کووہ لائن عبور نہیں کرنی چاہیے جس سے فوجی جوانوں کے عزتِ نفس کو ٹھیس پہنچنے کا اندیشہ ہو۔ درحقیقت زیدحامد جیسے بہت سے گھاگ، جنہیں عام طور پر دفاعی اداروں کا ایجنٹ سمجھا جاتا ہے، سوشل میڈیا پر حکومت کو آڑھے ہاتھوں لے رہے ہیں۔
جنرل راحیل شریف صاحب کو یقیناًعلم ہو گاکہ ایک سیاسی حکومت کی طرف سے عوامی سیاست کرتے ہوئے بعض اوقات ناروا بیانات بھی سرزد ہوجاتے ہیں... ایسے بیانات جن میں اشتعال انگیزی کی جھلک ملتی ہے....لیکن اسے صرف جذباتی بیانیہ ہی سمجھنا چاہیے کیونکہ یہ سب کو پتہ ہے کہ جنرل (ر) پرویز مشرف کو سزا، پھانسی یا قید، ملنے کاکوئی امکان نہیں ۔ نہ ہی کوئی اور جنرل احتساب کے کٹہرے میں کھڑا ہوتا دکھائی دیتا ہے۔پہلی بات یہ کہ جنرل مشرف بھی انہی سعودی بھائیوں کے پسندیدہ ہیں جنھوں نے نواز شریف کی جان بچائی اور کچھ دیگر احسانات بھی کیے۔ آج کل ایسا لگتا ہے کہ پاکستان سعودی عرب کی ایک ملحقہ کالونی بن چکا ہو جہاں محل کی طر ف سے سرمایہ کاری کرتے ہوئے اپنی پسندکی حکومت قائم کرنے اور اسے تقویت دینے کا کامیاب تجریہ کیا جارہاہے۔ تاہم اس کا مطلب یہ نہیں کہ آرمی چیف اس ’’اسٹرٹیجک تعلق‘‘ کا حصہ نہیں، اگرچہ دنیا کے ہمارے حصے میں طاقتور حلقوں کویہ دیکھ کر الجھن ہوگی ریاض کی توجہ اسلام آباد اور راولپنڈی کے درمیان بٹ کررہ گئی ہے۔ دراصل اسٹرٹیجک پارٹنر یہ بات اچھی طرح جانتے ہیں کہ طاقت کا محور کہاں ہے۔
دراصل نواز شریف اتنے عقل مند ضرور ہیں کہ وہ اس حقیقت سے باخبر ہوں کہ ہمارے ہاں بھاری اکثریت سے انتخابات جیتنے سے بھی معروضات تبدیل نہیں ہوتے ہیں۔ اگر وہ مشرف کیس کو آگے بڑھاتے دکھائی دیتے ہیں تو اس کا مطلب ایک طرف ہنگامے سے گھر کی رونق بحال رکھنا مقصود تو دوسری طرف یہ دیکھنا کہ فوجی قیادت ایک جمہوری حکومت کو کس حد تک قدم آگے بڑھانے دے گی۔ فی الحال وزیرِ اعظم نے عسکری اداروں کی مرضی کے مطابق سیاسی جماعتوں کی بھرپور مخالفت کے باجود تحفظِ پاکستان بل منظور کرلیا ہے۔ یہ بل دفاعی اور خفیہ اداروں کووسیع تراختیارات دے گا۔ دوسری طرف تمام تر دعووں کے باوجود موجودہ حکومت نے بھارت کے ساتھ تعلقات سے قدم پیچھے ہٹالیا کیونکہ وہ فوج کو ہر حال میں خوش کرنا چاہتی تھی۔ حال ہی میں ایک پریس بریفنگ میں نوجوان کامرس منسٹر کو کچھ صحافیوں نے آڑھے ہاتھوں لیتے ہوئے کہا کہ وہ بھارت کے ساتھ تجارتی تعلقات کے حوالے سے فوج کی زبان بول رہے ہیں۔
اب سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ جب دیگر معاملات پر وزیرِ اعظم عسکری قیادت کو خوش کرنے کی پالیسی پر گامزن ہیں تو وہ مشرف کیس میں کیونکہ محاذآرائی پر اتر آئیں گے؟ہو سکتا ہے کہ ان کی جماعت کے کچھ اہم افراد ، جن کا فوجی جنرلوں سے بھی رابطہ رہتا ہے، نے انہیں مشورہ دیا ہو کہ اس کیس میں وہ سابق آمر پر دباؤ ڈال سکتے ہیں اور یہ کہ اُنہیں ’’ ادھر ‘‘ سے کوئی خدشہ نہیں ہونا چاہیے۔ تاہم سابقہ تجربات بتاتے ہیں کہ ایسی صورتِ حال میں بعض اوقات ’’پیغام ‘‘ سمجھنے میں غلطی یا دیر ہوجاتی ہے۔ اس سے پہلے 1999 میں بھی یہی کچھ ہوا تھا جب حکومت کے کچھ ’’اندرونی ہاتھ ‘‘ صورتِ حال کا ادراک کرنے میں ناکام ہوگئے۔
تاہم ایک لمحے کے لیے فرض کرلیتے ہیں کہ شریف حکومت اس کیس کو منطقی انجام تک پہنچانا چاہتی ہے، تاہم پھر یہ دکھائی دیتا ہے کہ اس نے اپنا ہوم ورک اچھی طرح نہیں کیا۔ پارلیمنٹ میں خواجہ آصف کی جذباتی تقریر ، جس کے مضمرات مستقبل قریب میں ان کے سامنے آجائیں گے، کے علاوہ حکومت نے اس اہم مسلے پر اتفاقِ رائے حاصل کرنے کے لیے کسی مکالمے کی زحمت نہیں کی۔ درحقیقت اس وقت پاکستانی سول سوسائٹی کے زیادہ تر حلقے اور لبرل افراد اور ان کے دنیا بھر میں پھیلے ہوئے دوست جنرل مشرف کو سزا ملنے کے حق میں نہیں کیونکہ یہ تاثر گہراہوتا جارہا ہے مشرف کو سزا دے کر دائیں بازو سے تعلق رکھنے والے نواز شریف مضبوط ہو کر سول آمرکا روپ دھار لیں گے۔ لوگ اس بات پر بھی حیران ہیں کہ اس سے پہلے لگائے جانے والے مارشل لاء کو چیلنج کیوں نہیں کیا گیایا یہ کہ 2007 کے واقعے میں مشرف اکیلے ہی شامل یا ذمہ دار نہ تھے۔ اس لیے اگر انہیں مقدمے کا سامنا ہے تو انصاف کا تقاضاہے کہ دیگر ذمہ داروں کے خلاف بھی کاروائی ہونی چاہیے۔ ایک اور تفہیم ابھررہی ہے کہ ملک میں مذہبی عناصر، بشمول طالبان، سابق آمر کو سخت سزا پاتے ہوئے دیکھنا چاہتے ہیں۔ ان کے پیشِ نظر جمہوریت سے محبت نہیں بلکہ وہ مشرف کو اس لیے سزا پاتے ہوئے دیکھنا چاہتے ہیں کہ اُنھوں نے طالبان کے خلاف امریکہ کا ساتھ دیا۔
درحقیقت پاکستان میں صیحح او ر غلط کا کوئی پیمانہ نہیں، صرف اس سے فرق پڑتا ہے کہ آپ کس طرف سے کھیل رہے ہیں۔ اس وقت بہت سی باتوں کے جواب آنا باقی ہیں لیکن ایک بات تقریباً طے ہے کہ سابق آرمی چیف کو سزا نہیں ملے گی۔ مقدمے کوجب تک چلانا چاہیں چلاتے رہیں لیکن فوج اتنی طاقتور ضرور ہے کہ وہ اپنے مفادات کا تحفظ کرسکے۔ دراصل پاکستانی جمہوریت ابھی تبدیلی کے عمل سے گزررہی ہے، اس مرحلے پر دفاعی ادارے ہی طاقتور ہیں۔ اس وقت فوج بلوچستان میں جیسے چاہتی ہے کاروائی کررہی ہے جبکہ ہماری کہنے کو آزاد عدلیہ ڈی جی آئی ایس آئی یا ائی جی ایف سی کو طلب نہیں کرسکتی اور نہ ہی فوج کی اعلیٰ قیادت سے کوئی جواب طلبی کی جاسکتی ہے۔ فی الحال مستقبل میں بھی اس صورتِ حال کے تبدیل ہونے کے امکانات معدوم ہیں۔ یہ بات بھی کی جاتی ہے کہ سول حکومت کو اچھی کارکردگی دکھانی چاہیے تاکہ اس کے ہاتھ مضبوط ہوں اور یہ دفاعی اداروں پر بالا دستی حاصل کر سکے، لیکن یہ بات کہنا آسان، کرنا مشکل ہے۔ دراصل شخصیت پرستی پر مبنی سیاست میں حکومت خود کواتنا مضبوط سمجھتی ہے کہ جب تک حقیقی خطرہ سامنے نہیں آجاتا، وہ خود کو ہر لحاظ سے محفوظ سمجھتی ہے۔ اگر عالمی حالات پر نظر ڈالیں، جہاں فوج نے اپنے اختیار کو ختم کرکے سول حکومت کی بالا دستی تسلیم کر لی ، جیسا کہ لاطینی امریکہ میں، تو ہمیں دکھائی دے گا اس کے لیے ضروری ہے کہ فوج کی حوصلہ افزائی کی جائے ، خاص طور پر جب ملک پر بیرونی عوامل کی طرف سے دباؤ کاسامنا ہو ۔ اس کے علاوہ فوج کو یہ بھی علم ہو کہ شب خون مارنے کی بھاری قیمت چکانا پڑے گی۔ فی الحال پاکستان میں ایسی صورتِ حال موجود نہیں، ا س لیے خاطر جمع رکھیں، کچھ نہیں ہونے جارہا۔

نوٹ ! اس کالم کے جملہ حقوق بحق رائٹ ویژن میڈیا سنڈیکیٹ پاکستان محفوظ ہیں۔ اس کی کسی بھی صورت میں reproduction کی اجازت نہیں ہے

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *